ایران افریقی ممالک کی اقتصادی صلاحیتوں سے فائدہ اٹھانے پر سنجیدہ ہے

تہران، ارنا- ایرانی تیرہویں حکومت نے افریقی ممالک کے ساتھ خارجہ تعلقات کو مضبوط بنانے کو اپنی خارجہ پالیسی کی ترجیحات میں شامل کیا ہے۔ اس سلسلے میں صدر رئیسی نے  اس بات پر زور دیا ہے کہ نئے دور میں افریقی ممالک کے ساتھ مختلف اقتصادی، تجارتی اور سیاسی شعبوں میں تعاون کی سطح کی جامع ترقی کو مزید سنجیدگی سے آگے بڑھایا جائے گا۔

تیرہویں حکومت کے صدر نے افریقی ممالک کے مختلف حکام اور شخصیات کے ساتھ متعدد ملاقاتوں میں سیاسی، اقتصادی، تجارتی اور سیکورٹی تعلقات کو مضبوط بنانے پر زور دیا۔

صدر مملکت نے دونوں فریقوں کے درمیان تعلقات کی موجودہ سطح کو قابل قبول نہیں سمجھا اور وزارت خارجہ سے مطالبہ کیا کہ وہ تمام صلاحیتوں کی شناخت اور ایران اور  اس براعظم کے درمیان تعلقات کو بڑھانے کے لیے ایک آپریشنل میکانزم کا جائرہ اور ڈیزائن کرے۔

اسلامی انقلاب کے بعد افریقہ کے ساتھ تعلقات

نیوز چین ویب سائٹ کے مطابق، اسلامی انقلاب کے بعد، موزمبیق، افریقہ میں ایران کا اہم اتحادی بن گیا اور ایرانی رہنما نے 1985 میں اس ملک اور مشرقی افریقہ کے تین دیگر ممالک تنزانیہ، انگولا اور زمبابوے سے افریقہ کے ساتھ تعاون کو فروغ دینے اور تعلقات کو مضبوط بنانے کے لیے ملاقات کی۔

چینی ویب سائٹ نے مزید کہا کہ اگرچہ موزمبیق، ٹوگو اور گنی بساؤ کے ساتھ تعاون اور تجارت دیگر ممالک کے مقابلے میں کم نظر آتی ہے، لیکن تجارتی شراکت دار کے طور پر ان کی تاریخی اور تزویراتی اہمیت ہے۔

علاقائی اور بین الاقوامی اداروں میں سفارتی تعلقات کی ترقی

ٹوگو کے ایران کے ساتھ مضبوط تجارتی تعلقات نہیں ہیں، لیکن اسے ایران کا سب سے پرانا تجارتی پارٹنر سمجھا جاتا ہے، جس نے 1966 سے اس ملک کے ساتھ تعلقات برقرار رکھے ہوئے ہیں۔

ایران اور گنی بساؤ غیر وابستہ ممالک کی تحریک، اسلامی تعاون تنظیم اور افریقی یونین سمیت علاقائی اور بین الاقوامی اداروں میں سفارتی تعلقات کو فروغ دینے کے خواہاں ہیں اور 2012 سے 2013 تک گنی بساؤ کی حمایت کو مضبوط بنائیں گے۔ان اداروں میں انہوں نے دو طرفہ مذاکرات ہوئے اور پیداوار اور زراعت، کان کنی، سیکورٹی، صحت، تعمیرات، بجلی اور توانائی کے شعبوں میں تعاون کے معاہدوں پر دستخط کئے۔

دونوں ممالک نجی شعبے، چیمبرز آف کامرس اور قونصلر سروسز کے درمیان تعاون کو بڑھانے پر بھی غور کر رہے ہیں۔

 افریکن بزنس اخبار نے بھی اپنی ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ  ایرانی وزیر خارجہ "حسین امیر عبداللہیان" اس سے قبل  اپنے جمہوریہ مالی کے ہم منصب"عبداللہ دیوپ" اور ان کے ہمراہ وفد کی میزبانی کر چکے ہیں اور اس ملاقات میں دونوں فریقین نے دو طرفہ، علاقائی اور بین الاقوامی سطح پر مختلف امور پر تبادلہ خیال کیا۔

 اس ملاقات کے دوران، امیر عبداللہیان نے دوطرفہ تعلقات کی ترقی اور مرکزی حکومت کی خارجہ پالیسی میں افریقہ کی پوزیشن کے لیے دونوں ممالک کے حکام کے باہمی دوروں کی اہمیت پر زور دیا۔ دیوپ  بھی نے دو طرفہ تعلقات خاص طور پر تجارتی اور اقتصادی شعبوں میں تعاون کو بڑھانے کے لیے اپنے ملک کی تیاری کا بھی اظہار کیا۔

دونوں فریقوں نے تعلیم، صحت، نئی ٹیکنالوجیز، مویشی پالنا اور توانائی بالخصوص شمسی توانائی جیسے مشترکہ شعبوں میں تعاون کو فروغ دینے کی ضرورت پر بھی زور دیا اور جلد از جلد تعاون کے لیے روڈ میپ تیار کرنے پر اتفاق کیا۔

صدر رئیسی کی حکومت کی افریقی عوام کی آزادی اور ترقی کی حمایت

مڈل ایسٹ انسٹی ٹیوٹ کے مطابق ابراہیم رئیسی نے موزمبیق، ٹوگو اور گنی بساؤ کے حکام سے ملاقاتیں کی ہیں اور اپنے دور صدارت کے آغاز سے ہی افریقہ کے ساتھ تعاون کو بڑھانے اور اس کی مادی اور افرادی قوت کی صلاحیتوں کو تسلیم کرنے پر زور دیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پوری تاریخ میں مغربیوں نے بنیادی طور پر افریقی براعظم کی استعمار اور استحصال کی کوشش کی ہے اور آج وہ مختلف طریقوں سے اس براعظم میں اپنی خواہشات اور مفادات کی پیروی کر رہے ہیں۔ اپنی آزادی کو برقرار رکھنے کے لیے اس براعظم کے لوگوں کی کوششیں قابل قدر ہیں اور ان کی کامیابی کا انحصار قومی، ثقافتی شناخت سمیت جبر کے خلاف مزاحمت پر ہے۔

ایران افریقی ممالک کی اقتصادی صلاحیتوں سے فائدہ اٹھانے پر سنجیدہ ہے

ایرانی صدر مملکت نے بارہا کہا ہے کہ  وہ اپنی خارجہ پالیسی میں، ایران دنیا کے تمام ممالک بالخصوص پڑوسی ممالک اور مسلمانوں کے ساتھ تعامل کو وسعت دینے کی کوشش کرتے ہیں۔

صدر رئیسی نے تاریخی، سفارتی اور تزویراتی اہمیت کے حامل ممالک کے حکام سے ملاقاتیں کی ہیں اور اس عمل کو دنیا کے دیگر ممالک کے ساتھ ایران کے تعلقات کی بحالی کی کوشش کے طور پر دیکھا جا سکتا ہے۔

افریقہ کے معاشی مواقع

ایران کی خارجہ تعلقات کمیٹی کے چیئرمین "عباس گلرو" نے افریقہ کے ان گنت اقتصادی مواقع کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہپارلیمنٹ اور محکمہ خارجہ، ایران اور افریقی ممالک کے درمیان تعلقات کا جائزہ لے رہے ہیں، ہم سمجھتے ہیں کہ پارلیمانی تعلقات کو مضبوط بنانے کے ساتھ ساتھ ہمارے تعلقات کو اعلی سطح پر منصوبہ بندی اور پالیسی سازی کرنی ہوگی۔

گلرو نے کہا کہ افریقہ کے پاس خاص طور اقتصادی شعبوں میں بے شمار مواقع ہیں، افریقہ کچھ شعبوں جیسے لوہے اور باکسائٹ کی کان کنی، آٹو موٹیو انڈسٹری میں ہماری مارکیٹ کے طور پر، یا زراعت میں آف شور کاشتکاری اور مویشیوں کی پیداوار کے ذریعے ہماری قوم کی ضروریات کو پورا کر سکتا ہے۔

انہوں نے ایران اور افریقہ کے درمیان قابل توسیع اقتصادی تعلقات کی سطح کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ حالیہ مہینوں میں کی جانے والی کوششوں کی وجہ سے ایران اور افریقہ کے درمیان تجارت کی سطح میں اضافہ ہوا ہے لیکن ہمیں افریقہ کی درآمدی تجارت میں 1 ٹریلین ڈالر کا اپنا حصہ حاصل کرنے کی کوشش کرنی ہوگی۔

گلرو نے کہا کہ پارلیمانی تعلقات کی مضبوطی ایران اور افریقی ممالک کے درمیان دیگر مسائل پر تعلقات کو فروغ دینے کے لیے ایک اچھا پلیٹ فارم ہو سکتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ بنیادی طور پرہمیں اندورون ملک پر یہ نتیجہ اخذ کرنے کی ضرورت ہے کہ ہمیں افریقہ سے تعلقات کو کتنا تعاقب کرنا ہوگا ہم سمجھتے ہیں کہ اعلی ترین سطح پر، افریقہ کے صدر سے لے کر فرسٹ ڈپٹی چیف آف اسٹاف تک، متعلقہ وزراء کو ایک خصوصی پروگرام تیار کرکے پالیسی بنانی ہوگی تا کہ افریقہ کے ساتھ اقتصادی تعلقات کی راہ میں حائل رکاوٹوں کو دور کرتے ہوئے تعلقات کو فروغ دینے سے باہمی مفادات کی سمت میں سیاسی، اقتصادی اور تجارتی شعبوں میں تعلقات کو وسعت دے سکیں۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha