ایران کا آذربائیجان کی علاقائی سالمیت کے تحفظ اور جنگ کے خاتمے پر زور

تہران، ارنا – ایرانی صدر مملکت نے اس بات پر زور دیا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران کے سرحدی علاقوں میں سلامتی کو برقرار رکھنا ایک ترجیح ہے اور اس کے خلاف کسی بھی قسم کی جارحیت قابل قبول نہیں ہے، جمہوریہ آذربائیجان اور آرمینیا کو اس نکتے پر خصوصی توجہ دینا چاہیئے۔

یہ بات "حسن روحانی" نے بدھ کے روز کابینہ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔
انہوں نے کہا کہ ہم نے آرمینیا اور جمہوریہ آذربائیجان کے اعلی عہدیداروں کے ساتھ گفتگو میں آذربائیجان کی علاقائی سالمیت کے تحفظ پر زور دیا مگر ہمیں جنگ کے اصل پر بہت افسوس ہے اور ان اسے ختم ہونا چاہئے کیونکہ آگ اور خون کے ذریعے کوئی بھی مسئلہ حل نہیں ہوسکتا ہے اور دوسرے طریقوں کو کوشش کرنا جانا چاہیئے اور ہم اس کے لئے تیار ہیں۔
صدر روحانی نے اس بات پر زور دیا کہ اسلامی جمہوریہ ایران بھی کچھ لوگوں کو بعض بہانے کے ساتھ دہشت گردوں کو ہمارے سرحدی مقامات پر لانے کی اجازت نہیں دیتا ہے جن کے ساتھ ہم نے کئی سالوں سے شام میں مقابلہ کیا  اور یہ ناقابل قبول ہے اور ہمسایہ ممالک کے عہدیداروں کو واضح طور پر بتایا گیا ہے۔
انہوں نے آرمینیا اور جمہوریہ آذربائیجان کے درمیان جنگ کو علاقائی جنگ میں بدلنے پر متنبہ کیا اور کہا کہ ہمیں محتاط رہنا چاہئے کہ یہ جنگ علاقائی جنگ میں تبدیل نہ ہو اور اس جنگ پر پٹرول ڈالنے والے اس کے جاری رہنے پر توجہ دیں کہ یہ کسی بھی ملک کے مفاد میں نہیں ہے اور یہ جنگ سیاسی طور پر ختم ہونی چاہئے۔
ایرانی صدر نے اس بات پر زور دیا کہ قبضہ اور جنگ ہمارے لئے قابل قبول نہیں ہے اور ہم امید کرتے ہیں کہ جو کرنے والی کوششوں کے ساتھ استحکام اس خطے میں واپس آئے گا۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
2 + 1 =