یوکرائنی طیارہ حادثے میں ملوث افراد کا فیصلہ صرف ایران ہی کرلے گا: بہاروند

 تہران، ارنا- نائب ایرانی وزیر خارجہ برائے بین الاقوامی اور قانونی امور نے کہا کہ یوکرائنی طیارے حادثے کے انویسٹیگیشن کا کام ختم ہوچکا ہے اور حادثے میں ملوث افراد کا فیصلہ صرف ایران ہی کرلے گا۔

ان خیالات کا اظہار "محسن بہاروند" نے ہفتے کے روز ارنا نمائندے کیساتھ خصوصی انٹرویو دیتے ہوئے کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ یوکرائنی طیارہ حادثے کا انویسٹیگیشن ختم ہوچکا ہے اور اس حوالے سے کوئی شک و شبہ باقی نہیں رہ گیا ہے اور ہمیں حادثے سے متعلق پوری معلومات حاصل ہے۔

بہاروند کہا کہنا ہے کہ لیکن تکنیکی تحقیق کا ایک اور قدم باقی ہے اور وہ یہ کہ طیارے کا بلیک باکس کی ڈی کوڈینگ کی جائے جو ابھی نہیں ہوئی ہے؛ لیکن ہم اسے ڈی کوڈنگ کرنے کیلئے ہر وقت تیار ہیں۔

 نائب ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران طیارے کے بلیک باکس کی ڈی کوڈینگ اور ساتھ ہی قانونی کاروائی اور جرمانہ کا ادا کرنے سے متعلق مفاہمت پر تیار ہے۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ 8 جنوری 2020ء کو ایران کی جانب سے عراق میں امریکی فوجی اڈوں پر میزائل حملے ختم ہونے کے کچھ گھنٹے بعد یوکرین کا طیارہ ایران کے امام خمینی ائیرپورٹ کے قریب گر کر تباہ ہوگیا جس میں سوار 167 مسافر اور 9 عملے جاں بحق ہوگئے تھے۔

ایرانی مسلح افواج اندرونی تحقیقات کے بعد اس نتیجے پر پہنچیں کہ میزائل انسانی غلطی کی وجہ سے فائر ہوا جس کے نتیجے میں یوکرائنی طیارہ تباہ ہوا، اور معصوم لوگ جاں بحق ہوگئے۔

ایرانی وزیر خارجہ جواد ظریف نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ پر ٹویٹ کرتے ہوئے کہا حادثہ افسوس ناک ہے، متاثرہ خاندانوں سے معذرت چاہتے ہیں، طاقت کے گھمنڈ میں مبتلا مہم جو امریکہ پر ذمہ داری عائد ہوتی ہے۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
1 + 1 =