ریمدان گبد کا مقصد مشترکہ تجارت کو آسان بنانا ، تعلقات عامہ کو بڑھانا اور نقل و حمل کو ہموار کرنا ہے

اسلام آباد، ارنا – پاکستان میں تعینات ایرانی سفیر نے اس بات پر زور دیا ہے کہ اس سرحد کے افتتاح کا مقصد پاکستان اور اسلامی جمہوریہ ایران کے درمیان مشترکہ تجارت کو آسان بنانا ، تعلقات عامہ کو بڑھانا اور نقل و حمل کو ہموار کرنا ہے۔

یہ بات "سید محمد علی حسینی" نے ہفتہ کے روز ارنا نیوز ایجنسی کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی۔
اس موقع پر انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران کی پاکستان کے ساتھ 900 کلو میٹر طویل سرحد ہے لیکن میرجاوہ تفتان میں دونوں ممالک کے مابین صرف ایک ہی سرکاری عبور ہے۔
حسینی نے کہا کہ دونوں ممالک کے اعلی عہدیداروں نے دیگر دو کراسنگ "ریمدان گبد" اور "پیشین مند" کھولنے کا فیصلہ کیا۔
انہوں نے کہا کہ اب ریمدان گبد کراسنگ پر بنیادی ڈھانچے سے متعلق کام مکمل ہوچکا ہے اور آج اس کا افتتاح دونوں ممالک کے عہدیداروں کی موجودگی کے ساتھ ہی دونوں ہمسایہ ممالک کے درمیان دوسری سرکاری سرحد بن گیا ہے۔
انہوں نے ریمدان گبد عبور کی سرکاری سرگرمی کو اپنے پڑوسی کے ساتھ ایران کے تعاون کو بڑھانے اور مضبوط بنانے کے لئے ایک موثر اور اہم اقدام قرار دیا۔
انہوں نے کہا کہ پاکستان کے ساتھ ہمارے ملک کے تعلقات کی اہمیت کو مدنظر رکھتے ہوئے اس نئی عبور کی سرگرمی قدرتی طور پر دونوں ممالک کے لئے فائدہ مند ہے۔
انہوں نے مزید کہا کہ اس اقدام سے نہ صرف لوگوں کے ساتھ رابطوں کے لئے معاشی اور تجارتی تعاون میں اضافہ ہوگا بلکہ منشیات کی اسمگلنگ پر بھی قابو پایا جائے گا۔
 ایرانی سفیر نے کہا کہ اس کے علاوہ ، دونوں ممالک کے سرحدی رہائشیوں کا معیار زندگی اور سرحدی مقامات پر سیکیورٹی کی صورتحال میں بھی بہتری آئے گی۔
انہوں نے کہا کہ چونکہ ریمدان گبد کراسنگ ایران میں چابہار بندرگاہ اور پاکستان میں گوادر کی بندرگاہ کے قریب بھی ہے ، لہذا اس سے ان دونوں بندرگاہوں کے درمیان تعاون بڑھانے میں مدد مل سکتی ہے۔
حسینی نے مزید کہا کہ اگر ریمدان کراسنگ کو استعمال کیا جاتا ہے تو  میرجاوہ تفتان میں واقع دونوں ملکوں کی واحد باضابطہ سرحد میں ٹریفک کا بوجھ اور ٹریفک کی قلت کم ہوجائے گی۔

پاکستان سے ایران کی توقعات

پاکستان میں ایرانی سفیر نے کہا کہ سرحد پار بڑھانا اور ساتھ ہی سرحدی منڈیوں کی ترقی سے دونوں ممالک کے مفادات کو بالخصوص تحفظ حاصل ہوگا ، خاص طور پر مشترکہ بارڈر پٹی میں دونوں ممالک کی سلامتی کو تقویت ملے گی۔
انہوں نے کہا کہ نئی سرحد عبور کرنے کی سرگرمیوں اور بازاروں کی مضبوطی سے ، ہم دونوں ممالک کے مابین تجارت اور معاشی خوشحالی دیکھ سکتے ہیں ، خاص طور پر ہمسایہ سرحدی صوبے اس خوشحالی سے فائدہ اٹھا سکتے ہیں۔
حسینی نے اس بات پر زور دیا کہ ہماری توقع یہ ہے کہ مشترکہ کوشش اور تعاون مناسب رفتار کے ساتھ کیا جائے گا ، دونوں ممالک کی سرحدی گزرگاہوں کو بڑھنے اور خوشحالی ملنے دیں ، اور ہمارے سرحدی بازاروں کو مستحکم اور بڑھاوا دیں۔
انہوں نے کہا کہ اس سے ان علاقوں کی ترقی میں مدد ملے گی جس کا براہ راست اثر عوام کے معیار زندگی پر پڑے گا اور دونوں ممالک کے سرحدی باشندوں کے لئے روزگار اور مختلف مواقع کے مواقع پیدا ہوں گے۔
ایرانی وزیر ‎سڑک اور شہری ترقی "محمد اسلامی" اور پاکستانی وزیر دفاعی پیداوار "زبیدہ جلال" کی موجودگی میں ہفتہ کے روز ریمدان با ضابطہ سرحد کا افتتاح کردیا گیا۔
ریمدان بارڈر ایران اور پاکستان سرحد کے زیرو پوائنٹ پر چابہار کے ساتھ 120 کلومیٹر ہے اور گوادر تک پاکستان تقریبا 70 کلومیٹر ہے ، یہ نقطہ ایران ، پاکستان ، چین اور بھارت میں دنیا کی آبادی کا 37 فیصد تک پہنچنے کا بہترین راستہ اور راستہ ہے اور اس سرحد کا معیار تجارتی اور اقتصادی تعلقات کی ترقی کے لئے ایک ضرورت ہے۔
ریمدان سرحد میں سامان برآمد کرنے اور درآمد کرنے ، پاکستانی زائرین ، سیاحوں اور مسافروں کی آمدورفت کے لئے اچھی صلاحیت اور گنجائش ہے اور گوادر کی بندرگاہ سے اس کا فاصلہ قریب 70 کلومیٹر ہے اور ہمسایہ ممالک کے شہری دشتیاری اور چابہار جاسکتے ہیں اور پھر زمینی اور فضائی بیڑے کے ذریعے ایران کے مذہبی شہروں اور تفریحی اور سیاحت کے علاقوں کا سفر کریں۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha