ریمدان گبد کی سرحد کا افتتاح ایران پاکستان کی سرحدی سفارتکاری کے نفاذ کا پہلا قدم

تہران، ارنا – ریمدان اور گبد کراسنگ کا افتتاح اسلامی جمہوریہ ایران اور پاکستان کے درمیان تجارتی اور باہمی تعلقات بڑھانے کے لئے خوشخبری سمجھا جا سکتا ہے۔

اگرچہ ایران اور پاکستان دو ہمسایہ ممالک اور دو دوست دوست اور برادر ممالک کی حیثیت سے مشترکہ سرحد کے ساتھ ایک ہزار کلومیٹر طویل فاصلے پر باہمی تعلقات کی ترقی کے لاتعداد مواقع اور امکانات رکھتے ہیں مگر دونوں ممالک کے درمیان تجارتی تعلقات کا حجم ان مواقع اور صلاحیتوں سے مطابقت نہیں رکھتا۔
دوسرے لفظوں میں ریمدان گبد بارڈر کا افتتاح دونوں ممالک کے درمیان سرحدی سفارت کاری کے نفاذ کا پہلا قدم سمجھا جاسکتا ہے، یہ سرحد جو دونوں ممالک کے لئے بہت سے معاشی فوائد کا حامل ہے ، ایران اور پاکستان کے درمیان تجارت اور مقبول تبادلے کی مزید ترقی کی کھڑکی ہے۔
سرحدوں کے بہتر انتظام اور تجارت کو مضبوط بنانے کے لئے عمران خان حکومت کے نئے اقدام کا اعلان کیا گیا ہے جبکہ ایرانی وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے رواں سال 11 نومبر کو چارہویں بار کے لئے موجودہ حکومت پاکستان کے آغاز سے کے چوتھے دورے کے دوران اسلام آباد کے دورے پر اعلان کردیا کہ ہمارا ملک جامع ترقی کے لئے تیار ہے۔
ریمدان سرحد کا افتتاح ظریف کے دورہ پاکستان کا ایک اہم نتیجہ ہے۔ ایرانی وزیر خارجہ نے پاکستانی حکام کو آگاہ کیا کہ اسلامی جمہوریہ ایران جلد ہی صوبہ سیستان اور بلوچیستان میں ریمدان سرحد کا کھولے گا اور پاکستانی طرف سے گبد بارڈر کو بھی کھولنے کا مطالبہ کیا ہے، یہ بھی تجویز کیا گیا کہ دونوں ممالک کے درمیان "پیشین"  "مند" کراسنگ جیسے دیگر بارڈر کراسنگ کو بھی وقت کے ساتھ کھول دیا جائے اور دونوں ممالک کے مابین داخلی اور خارجی راستہ بڑھایا جائے۔
پاکستان کی سرکاری سرکاری خبر رساں ایجنسی (اے پی پی) نے ریمدان گبد سرحد کے افتتاح کو ایران کے ساتھ مشترکہ تجارتی تعاون کو گہرا کرنے کی سمت ایک قدم قرار دیا اور ایرانی وزیر خارجہ کے حوالے سے کہا ہے کہ دونوں ممالک تجارت کی راہ میں حائل رکاوٹوں کو دور کرنے اور ہر ممکن حد تک تعلقات کو مستحکم کرنے کے لئے پرعزم ہیں۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
4 + 13 =