خطے کی اقوام فلسطین کے مسئلے کو عالم اسلام کی پہلی ترجیح سمجھتی ہیں: ایران

تہران، ارنا - ایرانی اسپیکر کے معاون خصوصی نے کہا ہے کہ خطے کی اقوام اور اسلامی امت اپنے کچھ حکمرانوں کے برخلاف ، فلسطین کے مسئلے کو عالم اسلام کی پہلی ترجیح سمجھتی ہیں، القدس اور مقبوضہ علاقوں کی آزادی کے لئے جدوجہد کریں گی۔

فلسطینی انتفاضہ کی حمایت میں بین الاقوامی کانفرنس کے سکریٹری جنرل "حسین امیرعبداللہیان" نے بیروت میں فلسطینی مزاحمتی رہنماؤں کے حالیہ اجلاس کو فلسطین کے مستقبل اور مقبوضہ فلسطینی علاقے کو دہشتگرد ، نسل پرست اور مجرم صہیونیوں کے جوئے سے آزادی کے لئے فیصلہ کن اور اچھے اقدام قرار دیا ہے۔
انہوں نے کہا کہ فلسطینی عوام کی بیداری اور مزاحمت صدی کے معاہدے اور کچھ عرب حکمرانوں اور صیہونیوں کے درمیان تعلقات کو معمول پر لانے کی سازش کی ناکامی کی اصلی وجہ ہے۔
انہوں نے اس امید کا اظہار کیا ک فلسطینی گروپوں کے اتحاد اور مزاحمتی عمل پر توجہ دینے کے ساتھ ، ہم صہیونیوں کے خلاف معاہدوں کی منسوخی اور ایک نئے مقبول انتفاضہ کا آغاز دیکھیں گے۔
امیر عبداللہیان نے کہا کہ آج یہ بات تمام فلسطینیوں کے لئے ثابت ہوگئی ہے کہ" مزاحمت "اور" طاقت "وہ واحد زبانیں ہیں جو القدس پر صہیونی غاصبوں کو بخوبی سمجھتی ہیں۔
انہوں نے خطے کو غیر محفوظ بنانے میں صہیونیوں کے کردار پر زور دیتے ہوئے فلسطینی عوام کی مزاحمت اور جدوجہد کے لئے اسلامی جمہوریہ ایران کی 40 سالہ حمایت کو امریکہ اور صیہونیوں کے جرائم کے مقابلہ کرنے کے لئے اسلامی فریضہ قرار دیا۔
انہوں نے کہا کہ خطی عوام فلسطین کے مسئلے کو عالم اسلام کی پہلی ترجیح سمجھتے ہیں، القدس اور مقبوضہ علاقوں کی آزادی کے لئے جدوجہد کریں گے۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
2 + 12 =