ایران طالبان، حکومت اور افغان گروپوں کے درمیان مذاکرات میں آسانی پیدا کرنےپر تیار ہے: ظریف

تہران، ارنا -  ایرانی وزیر خارجہ نے طالبان، حکومت اور دیگر افغان گروپوں کے مابین مذاکرات میں آسانی پیدا کرنے کے لئے ایران کی آمادگی کا اعلان کیا۔

یہ بات محمد جواد ظریف نے اتوار کے روز طالبانی وفد کے سربراہ 'ملا برادر' کے ساتھ ایک ملاقات کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کہی۔

ظریف نے طالبان، حکومت اور دیگر افغان گروپوں کے مابین مذاکرات میں آسانی پیدا کرنے کے لئے ایران کی آمادگی کا اعلان کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ امید ہے کہ اس ملک میں قیام امن کے ساتھ ہی قابضین کا بہانہ جلد سے جلد ختم ہوجائے گا۔

انہوں نے کہا کہ افغانستان میں تمام نسلی گروہوں اور سیاسی گروہوں کی موجودگی کے ساتھ ایک جامع حکومت کی تشکیل کی تجویز پر اطمینان کا اظہار کیا۔

 انہوں نے بتایا کہ اس ملک کے سیاسی فیصلے کو جامع حکومت کے آئین کے مطابق ہونا چاہیے۔

ظریف نے کہا کہ افغانستان کے اچھے لوگ مظلوم ہیں افغانستان میں جنگ اور قبضے نے افغانستان کے عوام کو بڑا نقصان پہنچایا ہے۔

ایرانی وزیر نے کہا کہ امید ہے کہ عوام کے دکھ کے جلد از جلد خاتمے کیلیے اپنی تمام کوشش کریں اور جلد از جلد افغانستان میں قیام امن کے ساتھ قبضہ کاروں کا بہانہ ختم کیا جائےگا۔

انہوں نے امن عمل اور بین الافغانی مذاکرات کے بارے میں ایک رپورٹ پیش کرتے ہوئے کہا کہ  ایران - افغانستان تعلقات ہمیشہ دوستی دوستی پر مبنی رہے ہیں اور امید ہے کہ افغانستان میں امن و سکون کے قیام سے دونوں ممالک کے مابین تعلقات میں مزید وسعت آئے گی۔

اس موقع میں ملا برادر نے افغانستان اور خطے میں داعش کے تباہ کن کردار کا حوالہ دیتے ہوئے بین افغان مذاکرات کے عمل پر اطمینان کا اظہار کیا اور افغانستان میں مکمل امن کے لئے تمام نسلی گروہوں اور سیاسی گروہوں کی موجودگی میں ایک جامع حکومت کے قیام کی ضرورت پر زور دیا۔ .

سربراہی میں طالبان کے وفد کے سربراہ ملا برادر ، جو تہران میں ہے ، نے آج کی صبح ہمارے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف سے ملاقات کی۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha