صیہونی جوہری ہتھیاروں کے عدم پھیلاؤ کا جھوٹا چرواہا ہے: ظریف

نیویارک، ارنا - ایرانی وزیر خارجہ نے صیہونیوں کو جوہری ہتھیاروں کے عدم پھیلاؤ کا جھوٹا چرواہا قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ امریکہ نے بھی جوہری معاہدے اور جوہری عدم پھیلاؤ معاہدے سے علیحدگی کے ساتھ جوہری عدم پھیلاؤ معاہدے کو ایک بڑا دھچکا لگا ہے۔

یہ محمد جواد ظریف نے جمعہ کے روز اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی نشست میں جوہری ہتھیاروں کے خاتمے کے عالمی دن کے موقع پر ایک ویڈیو پیغام میں کہی۔
انہوں نے امریکہ جنہوں نے 75 سال قبل ہیروشیما اور ناکازاکی میں معصوم لوگوں پر گرنے والے جوہری بم کے پہلے اور واحد استعمال کنندہ پر سخت تنقید کرتے ہوئے اور اس امید کا اظہار کیا کہ یہ اجلاس انسانیت کو جوہری ہتھیاروں کے خوفناک خواب سے آزاد کرنے کے لئے عالمی متحرک تقویت کے لئے ایک گاڑی ثابت ہوگا۔
ظریف نے ایسے ہتھیاروں کو اسلحے سے پاک کرنے کے لئے جوہری عدم پھیلاؤ معاہدے کے جائزہ اجلاسوں کے لئے بار بار کی جانے والی درخواستوں اور ان کے استعمال پر پابندی عائد کرنے کے لئے بین الاقوامی عدالت انصاف کی مشاورتی رائے کا حوالہ دیتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ جوہری طاقتوں کو واضح ٹائم ٹیبل میں اپنی واضح ذمہ داریوں کو پورا کرنا ہوگا۔
انہوں نے مزید کہا کہ بدقسمتی سے امریکہ نہ صرف نئے جوہری ہتھیار تیار کرکے اپنے اسلحہ خانے کو اپ گریڈ اور مضبوط کررہا ہے بلکہ جوہری ہتھیاروں کی درخواست کی سطح کو کم کرنے کے ساتھ دوسرے ممالک کو بھی دھمکیاں دے رہا ہے اور انہوں نے جوہری معاہدے اور  این پی ٹی سے علیحدگی کے ساتھ این پی ٹی کو ایک بڑا دھچکا لگا ہے۔

اسرائیل عدم پھیلاؤ کا جھوٹا چرواہا ہے
ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ جبکہ امریکہ ناجائز صیہونی ریاست کی حمایت کرتا ہے جو مشرق وسطی کا واحد جوہری ہتھیار رکھنے والا ہے جس نے خفیہ طور پر خطے کے ممالک کے جوہری ہتھیاروں کو دھمکی دی ہے اور 60 سال سے زیادہ عرصے سے جوہری عدم پھیلاؤ کے نعرے کے ساتھ جھوٹے چرواہے کے کردار کا ادا کرتا ہے۔
انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ عالمی برادری کو صہیونیوں کو این پی ٹی پر شامل ہونے اور جوہری ہتھیاروں کے بغیر بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی کے معائنے کو قبول کرنے پر مجبور کرنا ہوگا۔
انہوں نے کہا کہ یقینا اس وقت تک جنرل اسمبلی کے ذریعہ ایک بین الاقوامی معمول کی منظوری دیدی جانی چاہئے اور یہ اعلان کرنا ہوگا کہ جوہری جنگ کا کوئی فاتح نہیں ہے اور نہیں ہونا چاہئے اور بیکوقت میں جوہری ہتھیاروں کے بغیر ممالک کو سیکیورٹی کی ضروری ضمانتیں دینے کی ضرورت ہے ۔
ظریف نے کہا کہ 2019 میں اسلحہ کے اخراجات میں 72۔9 ارب ڈالر کا نصف حصہ امریکہ سے تھا اور عالمی برادری سے خطاب کیا کہ کیا اگر اس رقم کو کرونا سے نمٹنے کے لئے مختص کیا گیا تھا تو کیا ہم موجودہ پریشانیوں کا سامنا کریں گے؟ صبر کافی ہے۔
تفصیلات کے مطابق، منعقدہ اجلاس میں مختلف ممالک کے قریب 100 وزرائے خارجہ نے بھی شرکت کی۔
اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی تمام 75ویں نشستوں کا ورچوئل کے طور پر انعقاد کیا گیا جس میں ہر ملک کے صرف ایک نمائندے نے شرکت کی۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
2 + 3 =