12 نومبر، 2019 1:10 PM
Journalist ID: 2392
News Code: 83551952
0 Persons
ایرانی جزیرے کیش: خلیج فارس کا موتی

تہران، ارنا – جزیرے کیش خلیج فارس کے سیاحتی جزیروں میں سے ایک ہے جو ایرانی جنوبی صوبے ہرمزگان میں واقع ہے جس میں ایک موتی کی طرح چمک رہا ہے.

سالانہ 17 لاکھ ملکی اور غیرملکی سیاح اس جزیرے کی سیر سے لطف اندوز ہورہے ہیں جس کی آبادی 24819 ہزار کی ہے.
جزیرے کیش ایران کے جنوبی علاقے میں واقع ہے اور صوبے ہرمزگان کے دوسرے علاقوں کی طرح موسم گرما میں بہت ہی گرمیاں اور موسم سرما میں بہت ہی خوشگوار ہو رہا ہے.


اس جزیرے میں سردیوں میں ہوا کا درجہ حرارت 27 سینٹی گریڈ ہوتا ہے اور بعض اوقات 32 سینٹی گریڈ تک پہنچتا ہے. جولائی اور اگست مہینوں میں اس کا درجہ حرارت عروج پر ہے۔
جزیرے کیش ایرانی جنوبی علاقے میں واقع ہے جس میں گرم آب و ہوا موجود ہے مگر کیش ان سیاحتی جزیروں میں سے ایک شمار ہوتا ہے کہ موسم بہار کے ابتداء میں اس کے آب و ہوا بہت ہی ٹھنڈا اور خوشگوار ہے اسی لئے بڑی تعداد میں سیاح جزیری کیش کے خوبصورت ساحلی علاقے کا رخ کرتے ہیں.
موسم گرما میں ہوا بہت گرم ہوتا ہے مگر اس میں موجودہ سہولیات کی وجہ سے سیاح اس کے مقامات اور بازار کی سیر سے لطف اندوز ہوسکتے ہیں.
موسم خزان اور سرما جزیرے کیش کی سیر کے لئے سب سے بہترین وقت ہے، فروری اور مارس مہینوں میں یہ جزیرہ بڑی تعداد میں ملکی اور غیرملکی سیاحوں کی میزبانی کر رہا ہے اور بارش کا سطح 21 ملی میٹر تک پہنچتی ہے.


جزیرے کیش میں مقامی عوام کے ذائقہ میں فرق کی وجہ سے مختلف قسم کے کھانا پکا جاتا ہے.
کیش اسلامی انقلاب سے پہلے یعنی 1979 سے قبل، شاہی خاندان اور ان کے مہمانوں کی سیاحت کا اہم مرکز تھا جبکہ انقلاب کے بعد بھی ایرانی شہری اپنے اہل خانہ کے ساتھ چھٹیاں منانے اس جزیرے کا رخ کرتے رہے ہیں اور یہاں کے خوبصورت ساحل اور دھوب سے مستفید ہوتے ہیں.
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
3 + 4 =