آئی اے ای اے ایرانی محرمانہ معلومات کی اشاعت بند کرے: کمالوندی

تہران، ارنا- ایرانی جوہری ادارے کے ترجمان نے کہا ہے کہ آئی اے ای اے کیجانب سے ایران کے محرمانہ خطوں اور معلومات کی اشاعت ایک معمول رویہ بن گیا ہے اور اس رویے کو جلد از جلد بند کرنا ہوگا ورنہ ایران اس کے رد عمل میں ضرور اقدامات اٹھائے گا۔

رپورٹ کے مطابق، "بہروز کمالوندی" نے ایک انٹرویو میں آئی اے ای اے کیجانب سے ایرانی جوہری سرگرمیوں سے معتلق معلومات کی اشاعت پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ عالمی جوہری ادارہ، بعض اوقات ایک ایسی رپورٹیں شائع کرتا ہے جن میں بعض باتوں کو عام طور پر پیش نہیں کرنی ہوگی۔

ایرانی جوہری ادارے کے ترجمان نے کہا کہ رپورٹ اس وقت جاری کی جانی ہوگی جب کوئی بڑی تبدیلی یا انحراف واقع ہو، اور کسی ملک کی جوہری تکنیکی سرگرمیوں کی اطلاع دینا اور پھیلانا ایک ناقابل یقین عمل ہے جو بڑی افسوس کی بات ہے کہ عالمی جوہری ادارے نے  طویل عرصے سے ان اصولوں پر عمل نہیں کیا ہے۔

 کمالوندی نے کہا کہ ہم نے مختلف حالات اور مختلف اوقات میں اس مسئلے کے خلاف بارہا احتجاج کیا ہے اور آخری بار گزشتہ سال فروری میں تھا، جب ہم نے ایک مکمل وضاحتی نوٹ دیا تھا کہ یہ ادارہ، ایران کی مائیکرو ٹیکنیکل سرگرمیوں کو کیوں شائع کرتا ہے؟

انہوں نے کہا کہ عالمی جوہری ادارہ دو بڑے کاموں کا ذمہ دار ہے، جن میں سے ایک یہ یقینی بنانا ہے کہ رکن ملک کی سرگرمیاں پُرامن اور غیر منحرف ہوں؛ ایک اور نکتہ ان ممالک کے پُرامن مقاصد میں مدد کرنا ہے جو بڑی افسوس کی بات ہے کہ آئی اے ای اے  نے ایران سے متعلق اپنا ثانوی کردار کم ادا کیا ہے اور اسلامی انجینئرز نے بھی عالمی جوہری ادارے کے ڈائریکٹر جنرل کے ساتھ اپنی حالیہ ملاقات میں اس مسئلے کا ذکر اور اس پر احتجاج کیا ہے۔

کمالوندی نے کہا کہ ان معلومات کی قدر بنیادی طور پر تجارتی ہے اور چونکہ یہ تکنیکی ہے، اس لیے اسے دوسروں کے لیے دستیاب نہیں کیا جانا ہوگا۔ لیکن بڑی افسوس کی بات ہے کہ آئی اے ای اے نے اس مسئلے کی تعمیل نہیں کی ہے اور دوسروں کو تفصیل سے قیمتی معلومات فراہم کی ہیں۔

انہوں نے مزید کہا اگر ہم عالمی جوہری ادارے کی ویب سائٹ کا مشاہدہ کریں، تو ہم دیکھیں گے کہ دوسرے ممالک سے متعلق ایسا نہیں ہوا ہے اور ایجنسی کی سائٹ پر ان تفصیلات کے ساتھ کوئی رپورٹ نہیں ہے، اگرچہ اس سائٹ تک رسائی رکن ممالک تک محدود ہے۔

کمالوندی نے کہا کہ عالمی جوہری ادارے کے قانون کا آرٹیکل 3 (ڈی)، ممالک کی معلومات کی رازداری کو برقرار رکھنے کی ضرورت پر زور دیتا ہے، یا آرٹیکل 7 کا پیراگراف 7 ڈائریکٹر جنرل اور بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی کے اراکین کو معلومات کی رازداری کے تحفظ کا پابند کرتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ حفاظتی معاہدے کے بارے میں، آرٹیکل 5 میں پیراگراف "اے" پر اس کا ذکر ہے کہ عالمی جوہری ادارے تک پہنچنے والی معلومات کو دوسروں کے ساتھ شیئر نہیں کیا جانا چاہیے۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha