شہید فخری زادہ پابندیوں اور دھمکیوں کو بے اثر کرنے کے ہیرو ہیں: علامہ رئیسی

تہران، ارنا – ایرانی عدلیہ کے سربراہ نے کہا ہے کہ شہید فخری زادہ جوہری اور دفاعی شعبوں میں دشمن کی پابندیوں اور دھمکیوں کو بے اثر کرنے کے ہیرو ہیں۔

یہ بات علامہ سید ابراہیم ر‏ئیسی نے پیر کے روز سپریم جوڈیشل کونسل کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔
انہوں نے کہا کہ دشمن کی طرف سے پیش کردہ زیادہ تر دھمکیوں اور سزاوں کو ملک کی ایٹمی اور دفاعی صنعتوں کے میدان میں تھا ، لیکن فخری زادہ اور شہریاری کی طرح افراد نے اپنی کوشش ، استقامت اور تخلیقی صلاحیتوں سے ان تمام خطرات اور ممانعتوں کو بے اثر کردیا۔
رئیسی نے کہا کہ تمام شعبوں خاص طور پر معاشی میدان میں پیداوار اور طاقت آج ایران میں تخلیقی نوجوانوں کی منطق بن چکی ہے۔
انہوں نے ملک کو تمام دفاعی اور معاشی میدانوں میں مضبوط بنانے کی ضرورت پر زور دیا جو دشمنوں کی مایوسی کا باعث بنے گی۔
انہوں نے کہا کہ یہ شہید سائنس دان ، جو متحرک جذبہ رکھنے والا اور ایک نامعلوم فوجی کی حیثیت سے کام کرتا تھا ، اپنے سائنسی علم کے ذریعہ وطن ، اسلامی جمہوریہ ایران اور خطے کے دفاع کے لئے ایک گراؤنڈ فراہم کرنے میں کامیاب رہا اور دفاعی طاقت کے حصول میں اس کا سب سے بڑا کردار تھا اور وہ حقیقتا ملک کے لئے ایک اثاثہ اور فخر تھا۔
انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ محسن فخری زادہ کی شہادت کے ساتھ ہی ملک کا سائنسی مارچ بجلی کی پیداوار کے میدان میں نہیں روکے گا۔
رئیسی نے پراسیکیوٹر جنرل ، مسلح افواج کے جنرل اسٹاف ، اور مسلح افواج کے عدلیہ منتظمین اور سکیورٹی اور انٹیلی جنس فورس پر مشتمل ایک ورکنگ گروپ تشکیل دینے کی ضرورت پر زور دیا جس میں مجرموں اور سائنسدان ڈاکٹر فخری زادے کے قتل میں ملوث افراد کی پیروی کی جائے۔
واضح رہے کہ ایران کے ایٹمی پروگرام کے بانی سائنسدان محسن فخری زادہ کو 27 نومبر میں تہران میں ایک دہشتگردانہ حملے میں شہید کر دیا گیا۔
ایران کے دارالحکومت تہران کے علاقے دماوند میں مسلح افراد نے ایرانی سائنسدان کی گاڑی پر حملہ کیا؛ حملہ آوروں نے ان کی گاڑی کے قریب دھماکا اور فائرنگ کی جس کے نتیجے میں سائنس دان محسن فخری زادہ شدید زخمی ہوگئے، اُنہیں قریبی اسپتال منتقل کیا گیا تاہم وہ جانبر نہ ہوسکے۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
6 + 2 =