5 جنوری، 2022 3:00 PM
Journalist ID: 2393
News Code: 84603644
0 Persons
کیا کوریائی مہمان ویانا مذاکرات میں تیزی لائیں گے؟

ویانا، ارنا - جنوبی کوریا کے نائب وزیر خارجہ کی قیادت میں ایک وفد ایران کے منجمد اثاثوں کی ادائیگی کا تعین کرنے کے لیے ایک ایسا وقت ویانا پہنچ گیا ہے جو پابندیاں اٹھانے کے لیے مذاکرات نازک مرحلے میں داخل ہو چکے ہیں اور ایران کے منجمد اثاثوں کی رہائی کے امکان نے بات چیت میں پیش رفت اور ایک معاہدے تک پہنچنے کی امیدوں کو نمایاں طور پر بڑھا دیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق جنوبی کوریا کے نائب وزیر خارجہ چوی چونگ کان آج مشترکہ کمیشن کے کوآرڈینیٹر اینریک مورا سے ملاقات کریں گے۔ جوہری معاہدے کے دیگر ارکان اور امریکہ سے ملاقاتیں ان کے دیگر منصوبوں میں شامل ہیں۔

اطلاعات کے مطابق گزشتہ روز جنوبی کوریا کے سفارت کار چوی چونگ کان اور جوائنٹ کمیشن کے کوآرڈینیٹر اور امریکی وفد کے درمیان ملاقات کےوقت کے تعین میں مصروف تھے اور کچھ گھنٹے پہلے سےرپورٹرز کوبرگ ہوٹل کے سامنے، جہاں پابندیوں کی بات چیت ہو رہی ہے، اور میریٹ Marriott) ہوٹل، جہاں P4+1 اور امریکی ملاقاتیں ہو رہی ہیں، اس ایونٹ کی خبروں کی کوریج کا انتظار کر رہے ہیں۔

مبصرین کا کہنا ہے کہ اس اقدام سے، جس سے ایران کے جنوبی کوریا کے قرضوں کی ادائیگی کی امید پیدا ہوئی ہے، اسے مذاکراتی عمل کی ایک مثبت علامت کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔ جنوبی کوریا ایران سے گیس کنڈینسیٹ کی خریداری کے لیے تقریباً 7 بلین ڈالر کا مقروض ہے، جس نے ایران کے خلاف پابندیوں کے بہانے سے 2018 سے ادا کرنے سے انکار کر دیا ہے۔

یہ بات اہم ہے کہ جنوبی کوریا کے وفد نے ایرانی مذاکراتی ٹیم کی دعوت پر ویانا کا سفر نہیں کیا۔ تو  کوریائی وفد کو دوسرے فریقین نے مدعو کیا ہے۔

جنوبی کوریا کی وزارت خارجہ کے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ چوی چونگ کان 2015 کے معاہدے کو بحال کرنے کے لیے اور مذاکراتی ٹیموں کے سربراہان سے ملاقات کے لیے 4-9 جنوری کو آسٹریا کے دارالحکومت کا دورہ کریں گے۔

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha