12 اپریل، 2021 12:30 PM
Journalist ID: 2392
News Code: 84292704
0 Persons
ملک پر عائد پابندی ختم کرنے کی پوری کوشش کریں گے: ایران

تہران ، ارنا- ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان نے اس بات پر زور دیا ہے کہ ایران کی حکومت کی پالیسیوں کے دائرہ کار میں وزارت خارجہ ملک پر ہر طرح کی پابندی ختم کرنے کے لئے ہر ممکن کوشش کرے گی اور سرکٹریج جو مدار سے باہر ہو گئے تھے وہ IR1 قسم کے تھے اور ان کی جگہ نئے سینٹری فیوجز لگائے گئے تھے۔

یہ بات "سعید خطیب زادہ" نے پیر کے روز اپنی آن لائن پریس کانفرنس سے خطاب کرت ہوئے کہی۔
انہوں نے نطنز جوہری مرکز میں گزشتہ روز ہونے والی تخریب کاری کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ناجائز صہیونی ریاست پہلے کیا لہراتی تھی اور جو بات آج مختلف ذرائع سے سنی جاتی ہے اس سے اشارہ ہوتا ہے کہ صہیونی وجود اس بزدلانہ حرکت کے پیچھے ہے۔
خطیب زادہ نے کہا کہ اس کام سے جوہری صلاحیتوں پر کوئی اثر نہیں پڑے گا اور نطنز کی سہولت میں موجود تمام سنٹرفیوج پرانے ماڈل کے ہیں اور ان کی جگہ جدید آلات دیئے جائیں گے اور اسی وجہ سے تخریب کاری ایکٹ نے ملک میں ایٹمی صنعت اور نہ ہی پابندی اٹھانے کے راستے کو منفی طور پر متاثر نہیں کیا ۔
انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ تخریب کاری انسانی اور ماحولیاتی تباہی کا باعث نہیں بن سکتی ہے لیکن یہ انسانیت کے خلاف جرائم کے مترادف ہے۔
انہوں نے مزید کہا کہ اس سے ایران کی جوہری صلاحیت متاثر نہیں ہوگی، ان تمام سینٹرفیوج IR1 قسم کے پرانے تھے اور ان کی جگہ جدید مشینیں لیں گی، ایران پھنسنے والا نہیں ہے، صہیونی ایرانی عوام سے ان کے صبر و سلوک کا بدلہ لیتی ہے اور اسلامی جمہوریہ ایران مناسب وقت میں انتقام لے گا۔


ویانا میں کوئی جوہری مذاکرات نہیں ہوگا
انہوں نے کہا کہ ویانا میں جاری مذاکرات جوہری گفت و شنید نہیں ہیں لیکن ایران پر امریکی پابندیوں کو ختم کرنے کے لئے تکنیکی تبادلہ خیال کرنا ہیں۔
ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان نے کہا کہ امریکی پابندیاں جوہری سے مختلف نہیں تھیں ، کیوں کہ انھیں ’زیادہ سے زیادہ دباؤ‘ کے مقصد کے لئے عائد کیا گیا ہے۔
 انہوں نے واضح کیا کہ جوہری معاہدے پر ایران کا مؤقف ابھی بھی وہی ہے جو صورتحال کو جنوری 2017 کے حالات میں ہونا چاہئے۔
انہوں نے کہا کہ 2018 میں جوہری معاہدے سے امریکی علیحدگی کے بعد ایران کے خلاف تمام پابندیوں کو دوبارہ شروع اور نافذ کرنے پر غور کرتا ہے اس سے قطع نظر کہ امریکہ پابندیوں میں فرق پیدا کرنے کے لئے استعمال کرتا ہے۔
انہوں نے امریکی پابندیوں کے خاتمے کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ جوہری معاہدے میں امریکہ کی واپسی پر ایران کی پالیسی واضح ہے۔ پچھلے چار سالوں میں اور نئی حکومت کے اقتدار سنبھالنے کے بعد سے دو ماہ میں امریکہ نے معاہدے کے تحت بیان کردہ ، جوہری معاہدے اور ایران کے تمام مفادات کو ختم کرنے کی پوری کوشش کی ہے۔ لہذا پابندیوں میں کوئی فرق نہیں ہے اور امریکی حکام نے زیادہ سے زیادہ دباؤ کے لئے پابندیاں عائد کرنے کی بات کی ہے۔
انہوں نے ایران کے ایٹمی طاقت پر نطنز حادثے کے اثرات پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ نطنز میں جو کچھ ہوا ایران کی جوہری صنعت کو روکتا نہیں ہے اور نہ ہی پابندیوں کے حل میں موثر ہے۔

نطنز سائٹ پر خرابکاری جوہری دہشت گردی ہے
انہوں نے ایران کے ذریعہ نطنز حادثے کے قانونی اور سیاسی تعاقب کے بارے میں کہا کہ اقوام متحدہ کے چارٹر اور آرٹیکل 51 کے مطابق ، ایران کو اپنے دفاع کا حق ہے۔ دہشت گردی کی یہ حرکت اس کے اصل مقام پر تھی جس کی وجہ سے انسانی تباہی ہوسکتی ہے لہذا یہ انسانیت کے خلاف جرم ہے۔ اس کارروائی پر مختلف ردعمل دیئے جائیں۔ کچھ جوابات بین الاقوامی حکام کو ہیں۔
خطیب زادہ کے مطابق، نیویارک میں ایرانی وزیر خارجہ اور نمائندہ  اس مسئلے پر غور کررہے ہیں اور کارروائیوں کا اعلان آج یا کل کیا جائے گا۔
انہوں نے روسی وزیر خارجہ کے دورہ تہران کا ذکر کرتے ہوئے دونوں ممالک کے تعلقات کو اسٹریٹجک قرار دیتے ہوئے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان مختلف سطحوں پر قریبی تعاون ہے، چنانچہ روس کے ساتھ معاہدے کے فریم ورک کے اندر ہمارے تعلقات کا پہلا انتظام تھا۔ ہم تعلقات کو بڑھانے اور بہتر بنانے کے لئے کوششیں کریں گے ، جس پر کل دستخط ہوں گے۔ یہ رشتے ہمیشہ اپ گریڈ ہوتے ہیں۔

 عالمی ایٹمی توانائی ایجنسی اور بین الاقوامی اداروں کو اپنی ذمہ داریوں کو پورا کرنا ہوگا
وزارت خارجہ کے ترجمان نے نطنز ویب سائٹ پر صہیونی کارروائی سے متعلق آئی اے ای اے کی خاموشی پر تبصرہ کیا کہ نطنز میں کیا ہوا اور اسرائیل کے ساتھ کیا ہو رہا ہے۔ ایجنسی اور بین الاقوامی مراکز کو اپنا کام کرنا چاہئے اور نہ صرف مذمت کرنا ، بلکہ ایسی کارروائیوں کو روکنا ہے۔ لیکن اسرائیل کا راستہ بالکل صاف ہے۔
خطیب زدہ نے مزید کہا کہ حقیقت یہ ہے کہ آپ نے اس حکومت کے وزیر اعظم سے یہ سنا ہے کہ وہ پابندیوں کو ختم کرنے سے روکنے کے لئے ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں اس کا مطلب یہ ہے کہ وہ ایرانی عوام سے انتقام لیتے ہوئے اپنے مقاصد کو حاصل کرنا چاہتے ہیں ، یقینا ان کا کیا مقصد ہے؟ کچی تخیل۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha