جنوبی کوریا کو ایران کی سات ارب ڈالر رقم کو واپس کرنا چاہیئے

تہران، ارنا – ایرانی محکمہ خارجہ کے ترجمان نے کہا ہے کہ جنوبی کوریا میں ایران کی سات ارب ڈالر رقم بلاک کردی گئی ہے جسے ایران واپس کرنا ہوگا۔

یہ بات "سید عباس موسوی" نے پیر کے روز اپنی ہفتہ وار پریس کانفرنس کے دوران صحافیوں کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی۔
اس موقع پر انہوں نے اسلامی جمہوریہ ایران کو جنوبی کوریا کی جانب سے بھیجنے والی طبی کھیپ جس کی شرح 500 ہزار ڈالر تھی، کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ جنوبی کوریا ہمارے بلاک ہونے والی رقم کی واپسی میں نظرانداز اور تاخیر کا شکار رہا ہے۔
موسوی نے کہا کہ جنوبی کوریا کی جانب سے عائد پابندیوں کا حوالہ دینا غلط ہے کیونکہ ایران کسی پابندی کے تابع نہیں ہے اور وہ امریکی پابندیوں کا حوالہ نہیں دے سکتے ہیں۔
انہوں نے مزید کہا کہ جنوبی کوریا کا نیا اقدام (ایران کو طبی سامان کی کھیپ بھیجنا) ایک چھوٹا اقدام مگر بہت دیر ہوچکا ہے، انہیں مزید سوچنے کی ضرورت ہے تاکہ دونوں ممالک کے مابین دیرینہ تعلقات کو مزید نقصان نہ پہنچے۔
انہوں نے امریکہ میں مظاہرے اور امریکی پولیس کے ذریعہ مظاہرین خصوصا سیاہ فام عوام کے خلاف کریک ڈاؤن کے شروع پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ انسانی حقوق کا دعویٰ کرتا ہے مگر اپنے شہریوں بالخصوص سیاہ فام شہریوں کے خلاف انتہائی وحشیانہ دباؤ کا مرتکب ہوتا ہے جسے سب کو پریشانی کا باعث بن گیا ہے۔
انہوں نے روس میں تعینات ایرانی سفیر کے ہتھیاروں کی خرید کے لئے دونوں ممالک کے درمیان مذاکرات سے متعلق حالیہ بیانات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران کو ایک آزاد ملک کی حیثیت سے یہ حق ہے کہ اسلحے کے سودے سمیت کوئی بھی معاہدہ کرے ، چاہے وہ خرید و فروخت میں ہو۔
ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان نے کہا کہ یقینا، ایران ایک ایسا ملک ہے جس میں مختلف جنگیں کے آلات پیدا ہوتے ہیں البتہ ماضی میں تنازعات پیدا کیا گیا کہ ہمیں امید ہے کہ اس کو دور کردیا جائے گا۔
انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ہم روس، چین یا پڑوسی اور دور دراز کے ممالک میں فرق نہیں کرکے آزاد تجارت کے تناظر میں مارکیٹ کے اصولوں کے مطابق عمل کرتے ہیں اور ہماری کوئی پابندی نہیں ہوگی۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
5 + 13 =