ایران کی ایرواسپیس کے شعبے میں اسلامی ممالک کے درمیان پہلی پوزیشن

تہران، ارنا – ایرانی ایرو اسپیس ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کے سربراہ نے کہا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران ایرواسپیس کے کے شعبے میں اسلامی ممالک کے درمیان پہلے اور دنیا میں 13 ویں نمبر پر ہے۔

یہ بات "فتح اللہ امی" نے اتوار کے روز ارنا نیوز ایجنسی کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی۔
انہوں نے اس ہفتے کو "عالمی خلائی ہفتہ" کے نام دینے کو اسلامی جمہوریہ ایران کے اعزاز میں سے ایک قرار دیتے ہوئے کہا کہ اقوام متحدہ میں امریکہ ، روس اور ایران کے ذریعہ خلائی دن کے نام سے متعلق تجاویز کو پیش کیا گیا تھا کہ آخر کار ایران کی عالمی خلائی ہفتہ کے نام کی تجویز پر اتفاق کیا گیا۔
امی نے کہا کہ ایرو اسپیس ریسرچ انسٹی ٹیوٹ اعلی پانچ قومی تحقیقی اداروں اور 20 سر فہرست عالمی تحقیقاتی اداروں میں شامل ہے اور ہمارا ملک ایرواسپیس کے شعبے میں اسلامی ممالک کے درمیان پہلے اور دنیا میں 13 ویں نمبر پر ہے۔
انہوں نے "دوستی اور شریف ست" سیٹلائٹس جسے شریف یونیورسٹی کے ماہرین نے ڈیزائن کیا اور بنایا تھا، کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اب ہم ایک طاقتور خلاباز لانچ سائٹ بنانے کے قابل ہوچکے ہیں اور ان کو ان مصنوعی سیاروں کو لانچ کرنے کے لئے استعمال کریں گے۔
انہوں نے مزید کہا کہ پیام سیٹلائٹ کے لانچ ہمارے مصنوعی سیارہ اور خلائی جہاز کے لئے ایک قیمتی آزمائش تھا اور سیمرغ سیٹلائٹ جس نے پیغام کو خلا تک پہنچایا ، اس کی ڈیزائن میں استعمال ہونے والی ایک بہت بڑی ٹکنالوجی تھی۔
ایرو اسپیس ریسرچ انسٹی ٹیوٹ کے سربراہ نے اس بات پر زور دیا کہ اب ہم علم کی حدود کی ترقی کے سلسلے میں ایک بہت اچھی پوزیشن میں ہیں اور خطے کا مرکز ہیں۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
3 + 12 =