تہران، 17 اکتوبر، ارنا - اسلامی جمہوریہ ایران کے سپریم لیڈر نے فرمایا ہے کہ آج ایران کے دشمن ملکی حالات کو منفی انداز میں پیش کرکے عوام کے درمیان مایوس پھیلانے پر کام کررہے ہیں تاہم اللہ کے فضل سے دشمنوں کی سازشوں کے مقابلے میں ایران کو بالادستی حاصل ہے.

ان خیالات کا اظہار حضرت آیت اللہ العظمی سید علی خامنہ ای نے بدھ کے روز تہران میں ملک کے ممتاز سائنسی ماہرین، اعلی کارکردگی دیکھانے والے سائنسدانوں اور دانشوروں کے ساتھ ایک ملاقات میں خطاب کرتے ہوئے کیا.
انہوں نے فرمایا کہ اگر ہم سا‎ئنس کے میدان میں ترقی کریں تو دشمن کی سیاسی، اقتصادی اور ثقافتی دھمکیوں بھی کم ہو جائے گی.
ایرانی قائد نے سائنس کے شعبے میں ترقی یافتہ ممالک کے ساتھ باہمی سائنسی تعاون کو فروغ دینے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے فرمایا کہ ایسے ممالک اغلب ایشیا میں ہیں لہذا ہمیں مغرب کے بجائے مشرقی ممالک پر توجہ مرکوز رکھنا چاہیے کیونکہ مغرب اور یورپ پر انحصار کرنے سے خودکم بینی، حقارت اور منت کے سوا کچھ حاصل نہیں ہو گا.
ایرانی سپریم لیڈر نے ایران پرمسلط کردہ 8 سالہ جنگ پر تبصرہ کرتے ہوئے فرمایا کہ ممتاز شخصیات اس جنگ کو نظر انداز نہیں کر سکتے ہیں۔
انہوں نے دشمن کی پروپیگنڈا جنگ کو آٹھ سالہ جنگ سے تشبیہ دیتے ہوئے فرمایا کہ ایران پر مسلط کی جانے والی جنگ کے ابتدائی دور کی طرح ہماری پروموشنل سہولیات کم ہے لیکن جیسا کہ اسی جنگ میں ہم کامیاب ہوگئے ویسا بھی دشمن کی نفسیاتی جنگ میں بغیر کسی شک و شبہ کامیاب ہوجائیں گے۔
آیت اللہ خامنہ ای نے ملک کی سائنسی ترقی میں ممتاز شخصیتوں کے کردار پر زور دیتے ہوئے فرمایا کہ ممتاز شخصیات کی صلاحیتوں سے صحیح فائدہ اٹھانے کے ذریعے ملک میں سائنس کی ترقی سمیت ہماری عزت اور طاقت مزید بڑھ کر، خطرات کم کرنے میں مدد ملے گے۔
قائد انقلاب اسلامی نے سامراجی قوتوں کی سازشوں سے مقابلہ کرنے کے طریقے کو قومی شناخت اور ارمان پسندی کی تقویت قرار دے کر فرمایا کہ ملک کے ممتاز شخصیات کو اپنے ملک، مذہب، قومی شناخت، ارمانوں اور شرافتمندانہ تاریخ پر فخر کرنا چاہیے۔
انہون نے فرمایا کہ ملک کے دشمن عناصر، قوم کی شناخت اور ارمانوں کی تباہی کے لئے منصوبہ بندی کر رہے ہیں اور ہمیں اس بات کا خیال رکھنا چاہیے۔
9410* 9467*

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@