ایران اور روس کے درمیان تعلقات پر ایک نیا روڈ میپ تیار کیا جائے گا: امیرعبداللہیان

ماسکو، ارنا – ایرانی وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران اور روسی فیڈریشن کے درمیان تعلقات کے حوالے سے ایک نیا روڈ میپ تیار کیا جائے گا۔

یہ بات حسین امیرعبداللہیان کے ایک مضمون میں سامنے آئی ہے جو روسی خبر رساں ایجنسی "سپوٹنک" کی ویب سائٹ پر صدر مملکت "علامہ ابراہیم رئیسی" کے دورہ ماسکو کے موقع پر شائع ہوئی ہے۔
انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ تہران اور ماسکو بین الاقوامی میدان میں ہونے والی پیش رفت کے مطابق باہمی تعلقات اور تعاون کے اصولوں کے معاہدے کو اپ ڈیٹ کرنے کے لیے پرعزم ہیں۔
انہوں نے کہا کہ آیت اللہ رئیسی کا بدھ کے روز دورہ ماسکو خصوصی حالات میں اور روسی صدر ولادیمیر پیوٹن کی سرکاری دعوت پر ہو رہا ہے۔
امیرعبداللہیان نے کہا کہ نئی ایرانی حکومت روس کو ایک قابل پڑوسی اور دوست کے طور پر دیکھتی ہے اور اس کے ساتھ مفادات اور باہمی احترام پر مبنی تعاون سے منسلک ہے۔
انہوں نے مزید کہا کہ تہران مختلف شعبوں میں دوطرفہ تعلقات کی سطح میں نمایاں تبدیلی اور ماسکو کے ساتھ اعلیٰ سطحی وفود کا تبادلہ کرنا چاہتا ہے۔ یہ کورونا وبا کی وجہ سے عائد پابندیوں کے باوجود ہے۔
انہوں نے وضاحت کی کہ دونوں فریقین کی بات چیت میں دو طرفہ سطح پر بہت سے امور سیاسی، اقتصادی، ثقافتی، سائنسی، تکنیکی، دفاعی، سلامتی، پارلیمانی اور میڈیا، علاقائی بشمول مشرق وسطیٰ، جنوبی قفقاز اور وسطی ایشیا اور بین الاقوامی جیسے کہ ویانا میں پابندی کو منسوخ کرنے پر جاری مذاکرات شامل ہوں گے۔
انہوں نے یہ بھی نوٹ کیا کہ دونوں ممالک دو طرفہ امور کے حوالے سے روس اور ایران کے درمیان باہمی تعلقات اور تعاون کے اصولوں کے معاہدے کو اپ ڈیٹ کرنے کے لیے پرعزم ہیں۔
ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران اور روس کے درمیان بہت سے اقتصادی، صنعتی اور زرعی منصوبے ہیں، جو دونوں ممالک کے درمیان تعاون کے فریم ورک کے اندر بنائے گئے اور نافذ کیے گئے ہیں۔
انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ شنگھائی اقتصادی تعاون تنظیم میں ایران کی شمولیت اور یوریشین اقتصادی تعاون یونین کے رکن ممالک کے ساتھ اس کے بڑھتے ہوئے تعاون نے ایران اور روس کے اقتصادی تعلقات کو مضبوط بنانے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔
 انہوں نے مزید کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان اقتصادی تعلقات مستقبل کے امید افزا امکانات پر قائم ہیں۔
انہوں نے ثقافتی تعاون اور عوامی رابطوں کے حوالے سے کہا کہ ثقافتی مراکز کے قیام اور ان کی سرگرمیوں کے فریم ورک کے معاہدے سے ایران اور روس کے درمیان ثقافتی تعلقات کی سطح کو اپ گریڈ کرنے کی راہ ہموار ہوئی ہے۔
انہوں نے رہبر انقلاب اسلامی کا پیغام روسی صدر (پیوٹن) تک پہنچانے کے لیے پارلیمنٹ کے اسپیکر "محمد باقر قالیباف" کے دورہ ماسکو، روسی ڈوما کے سربراہ "وشلاو والودین" کے دورہ تہران کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ان بات چیت سے دونوں فریقوں کے درمیان پارلیمانی سفارت کاری کو مضبوط بنانے میں مدد ملی۔
امیر عبداللہیان نے اپنے مضمون میں اس بات پر بھی زور دیا کہ ایران اور روس کے درمیان سیکورٹی، دفاعی اور فوجی شعبوں میں تعاون آگے بڑھ رہا ہے۔
انہوں نے بحر ہند اور بحیرہ عمان میں ایران، روس اور چین کی مشترکہ مشقوں کا ذکر کیا۔
انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران اور روسی وفاقی جمہوریہ، دو قابل علاقائی ممالک کے طور پر، خطے کی مساوات، علاقائی اختلافات کو حل کرنے اور دہشت گردی کے خلاف جنگ میں بے مثال اور ممتاز کردار ادا کرتے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ تہران اور ماسکو کا مشترکہ موقف ہے کہ خطے کے معاملات میں بیرونی مداخلت بہت سے مخمصوں کا سبب ہے جن میں جنگیں، سیکورٹی افراتفری اور خطے میں عدم استحکام شامل ہے۔
 انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ افغانستان، روس، یمن اور لیبیا میں استحکام کو مستحکم کرنے کے مقصد سے دو طرفہ مشاورت جاری ہے۔
انہوں نے شام کے بحران کے حل کے لیے آستانہ مذاکرات کے فریم ورک کے اندر ایران اور روس کے تعاون کا بھی حوالہ دیا اس کامیاب اقدام کو شام میں تعمیر نو اور سلامتی اور استحکام کو مضبوط بنانے سمیت تمام شعبوں کے لیے ایک رول ماڈل قرار دیا۔
اس مضمون میں امیر عبداللہیان نے غیر منصفانہ امریکی پابندیوں کے خاتمے پر ویانا میں ہونے والے جوہری مذاکرات کا حوالہ دیا کہا کہ نئی ایرانی حکومت ایک آپریشنل اور نتائج پر مبنی وژن کی بنیاد پر، ایک اچھے معاہدے تک پہنچنے کے مقصد کے ساتھ عمل میں موجود ہے۔
انہوں نے مزید کہا کہ میں اعلان کرتا ہوں کہ روسی وفاقی جمہوریہ نے 2015 کے جوہری معاہدے تک پہنچنے کے تناظر میں ایک تعمیری کردار ادا کیا اور ایران اور 4+1 گروپ کے درمیان حالیہ مذاکرات کے دوران ایران پر پابندیاں کے خاتمے کے تناظر میں اپنے مثبت اقدامات کو جاری رکھے ہوئے ہے۔
یہ بات قابل ذکر ہے کہ ایرانی صدر مملکت علامہ ابراہیم رئیسی اپنے روسی ہم منصب ولادیمیر پیوٹن کی سرکاری دعوت پر اور اقتصادی، سیاسی اور ثقافتی تعلقات کو وسعت دینے کے لیے مشترکہ کوششوں کے تناظر میں کل بروز بدھ ماسکو کا دورہ کریں گے۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha