ایرانی ایٹمی سائنسدانوں کا قتل ریاستی دہشت گردی کی ایک مثال ہے

تہران، ،ارنا -  آج ایک ممتاز ایرانی ایٹمی سائنسدان مسعود علیمحمدی کی شہادت کی بارہویں برسی تھی جنہوں نے ایران کے پرامن ایٹمی علم کو فروغ دینے اور مقامی بنانے کے لیے کام کیا۔

شہید علی محمدی 12 جنوری 2010 کو تہران میں اپنی گاڑی اسٹارٹ کرنے کی کوشش کرتے ہوئے کار میں نصب بم سے شہید ہوئے اور دیگر ایرانی شہداء میں شامل ہوئے۔

شہید علیمحمدی کی سوانح عمری:

شہید مسعود علیمحمدی اپریل 1962 میں خوزستان کے شہر ایذہ کے ایک گاؤں میں پیدا ہوئے اور انہوں نے شیراز یونیورسٹی سے بیچلر کی ڈگری حاصل کی اور شریف یونیورسٹی آف ٹیکنالوجی سے ماسٹرز اور ڈاکٹریٹ کی ڈگری حاصل کی۔

ان کی اہم تخصص ابتدائی ذرات، ذراتی طبیعیات اور کائناتی علوم تھیں۔

سائنسدانوں کو قتل کرنے کی کوشش ریاستی دہشت گردی کی مثال ہے

جوہری توانائی کے پرامن استعمال پر پابندی کا اقدام اور صیہونی حکومت سے وابستہ عناصر کی جانب سے ایرانی سائنسدانوں کا ٹارگٹڈ قتل کسی ملک کی ترقی اور خود ارادیت کے حق اور انسانی حقوق کی خلاف ورزی کی واضح مثال ہے۔

زندگی کا حق ہر فرد کا بنیادی حق ہے اور کسی بھی حالت میں انسانی جانوں خصوصاً کسی ملک کے اشرافیہ کی جان نہیں چھینی جا سکتی ہے۔

زندگی کی من مانی محرومی کا قاعدہ صرف ایک علاقے تک محدود نہیں ہے، اور تمام حکومتوں کو ہمیشہ ان اصولوں کا احترام اور ہر وقت اور جگہ پر عمل کرنا چاہیے،جس اہم مسئلے کو صیہونی حکومت نے حالیہ برسوں میں مختلف ممالک کے شہریوں کے حوالے سے ہمیشہ نظر انداز کیا ہے۔

ایران سمیت ممالک بین الاقوامی دستاویزات خاص طور پر جوہری ہتھیاروں کے عدم پھیلاؤ کے معاہدہ کے مطابق  عمل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

ان ممالک نے اپنے ایٹمی سائنسدانوں پر خصوصی توجہ دی ہے کیونکہ ایٹمی توانائی کے پرامن استعمال کا حق پائیدار ترقی کا حصول ممکن بناتا ہے۔

مقامی انسانی قوتوں اور ایٹمی سائنسدانوں پر انحصار کرنے کے لیے ایران کی کوششیں بین الاقوامی قانون کے میدان میں اس کی مضبوط بنیادیں ہیں۔ اور ایک دہشت گرد تنظیم کے ہاتھوں 7000 شہیدوں کا قتل اور اسلامی جمہوریہ ایران میں ایٹمی سائنسدانوں کی ریاستی اور غیر ریاستی قتل بین الاقوامی قوانین کی خلاف ورزی کی مثالیں ہیں اور یہ انسانیت کے خلاف جرم ہے اور اسلامی جمہوریہ ایران ان جرائم کو کسی صورت نہیں چھوڑے گا۔ یہ انسانیت کے خلاف جرم ہے اور اسلامی جمہوریہ ایران ان جرائم کے ملوثین کو کیفر کردار تک پہنچائے گا۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@ 

https://twitter.com/IRNAURDU1

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha