ویانا مذاکرات میں اختلافات کو کم کرنا؛ میڈیا تازہ خبروں کیلئے بے چین ہے

تہران، 9 جنوری۔ ارنا – ایران کے اعلیٰ جوہری مذاکرات کار کے کل رات ویانا میں ہونے والے مذاکرات میں پیش رفت کے بارے میں بیانات نے کچھ میڈیا اداروں کو اس قدر پرجوش کر دیا کہ انہوں نے ان کے تبصروں کو توڑ مروڑ کر پیش کیا۔

علی باقری کنی کا یہ بیان اس حوالے سے دیا گیا ہے کہ 30 دسمبر 2021 کو ہونے والے جوہری معاہدے کے مشترکہ کمیشن کے کوآرڈینیٹر انریکہ مورا کی پریس کانفرنس کے بعد مذاکرات کی کوئی تفصیلات ظاہر نہیں کی گئیں اور اس دوران صحافیوں نے یہ بات کہی۔ خاص طور پر عالمی شہرت یافتہ ٹی وی صحافی، مذاکرات کی پیشرفت پر نئے پیغامات کے منتظر تھے۔
حالیہ دنوں میں مذاکراتی فریقوں کے درمیان ملاقاتوں کی تعداد میں نمایاں اضافہ ہوا ہے۔ مبصرین کے مطابق مذاکرات فیصلہ سازی کے نازک مرحلے میں داخل ہو چکے ہیں۔
باقری نے صحافیوں کو بتایا کہ باہمی سمجھوتوں کو تیار کرنے کے عمل میں تمام مشکلات کے باوجود، الٹی گنتی آ گئی ہے۔ مشاورت میں زیادہ تر شرکاء نے حتمی معاہدے کی طرف بڑھنے میں ہونے والی پیش رفت کو نوٹ کیا۔
انہوں نے مزید کہا کہ اگر کوئی معاہدہ طے پا جاتا ہے تو امریکہ کو تمام پابندیاں اٹھا لینی چاہئیں۔
انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ پھر تصدیق کے بعد اس معاہدے کے تحت ایران کی ذمہ داریوں پر عمل درآمد کیا جائے گا۔
ایرانی وفد کے سربراہ کے کل کے بیانات کے بعد دنیا بھر کے بہت سے ذرائع ابلاغ کا خیال ہے کہ ویانا مذاکرات میں ایک اہم واقعہ رونما ہوگا۔
ویانا مذاکرات کا پیر کے روز نئے سال کے وقفے کے بعد آٹھواں دور دوبارہ شروع کیا گیا جس کا مقصد جوہری معاہدے کو اس کی اصل شکل میں دوبارہ قائم کرنا اور امریکہ کو اس کثیر جہتی معاہدے کی طرف لوٹانا ہے۔
ایران کے مشترکہ کمیشن اور "پانچ" بین الاقوامی ثالثوں (روس، برطانیہ، جرمنی، چین اور فرانس) کی ملاقات کے بعد فریقین نے معاہدے کے مسودے پر کام کے عمل کو تیز کرنے اور فروری کے اوائل تک اسے مکمل کرنے پر اتفاق کیا۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha