ایرانی اسپیکر نے ایران اور شام کے نجی شعبوں کی حمایت کی ضرورت پر زور دیا

تہران، ارنا- ایرانی پارلیمنٹ کے اسپیکر نے ایران اور شام کے درمیان اقتصادی تعاون بڑھانے کے سلسلے میں نجی شعبوں کی حمایت کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ اج سب سے اہم بات تہران- دمشق کے درمیان اقتصادی تعلقات کو وسعت دینا ہے۔

قالیباف نے ایران کے دورے پر آئے ہوئے شامی وزیر خارجہ "فیصل مقداد" میں ایک ملاقات میں کہا کہ آج ہمارا سب سے اہم مسئلہ دونوں ممالک کے درمیان اقتصادی ترقی ہے اور اس کی واضح وجہ یہ ہے کہ مزاحمتی محاذ کے دشمن اقتصادی جنگ کے میدان میں کچھ حاصل کرنے کے درپے ہیں جو وہ حاصل نہیں کر سکے اور اس لیے ہمیں اقتصادی اور سیاسی میدان میں کامیابی حاصل کرنے کی کوششیں کرنی ہوں گی۔

 انہوں نے مزید کہا کہ شام میں جن امور پر اتفاق کیا گیا تھا، ہم نے ان سے متعلق کئی اہم ملاقاتیں کیں اور دونوں ممالک کے نجی شعبوں کی سرگرمیوں کو آسان بنانے، چیمبر آف کامرس کو فعال کرنے اور صنعتی اور زرعی پیداوار کو فروغ دینے میں مدد جیسے مسائل پر زیادہ توجہ مرکوز کی۔

 قالیباف نے ایران اور شام کے درمیان اقتصادی تعاون بڑھانے کے سلسلے میں نجی شعبوں کی حمایت کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ آج سب سے اہم بات تہران- دمشق کے درمیان اقتصادی تعلقات کو وسعت دینا ہے اور اس کی واضح وجہ یہ ہے کہ مزاحمتی محاذ کے دشمن اقتصادی جنگ کے میدان میں کچھ حاصل کرنے کے درپے ہیں جو وہ حاصل نہیں کر سکے اور اس لیے ہمیں اقتصادی اور سیاسی میدان میں کامیابی حاصل کرنے کی کوششیں کرنی ہوں گی۔

انہوں نے مستقبل قریب میں دمشق میں ایرانی وزیر برائے مواصلات اور شہری ترقی کی شرکت سے ایران اور شام کے درمیان مشترکہ اقتصادی کمیشن کے اجلاس کے انعقاد پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ اقتصادی اور سیاسی مسائل کے علاوہ موجودہ عدم تحفظات کو شام انٹرا ڈائیلاگ کے ذریعے حل کیا جانا ہوگا اور ایران آستانہ امن عمل کے فریم ورک میں اپنا کردار ادا کرنے کے لیے تعاون پر تیار ہے۔

دراین اثنا شامی وزیر خارجہ نے کہا کہ آج مجھے ایران میں جمہوریت کی بنیاد اور ایوانِ اقتدار میں آنے پر خوشی ہے جو کہ خطے کی قوموں کے لیے امید کی کرن ہے کہ ہماری آزادی اور خودمختاری کو ہمیشہ برقرار رکھیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ میں آپ کو صدر بشار الاسد اور شامی پارلیمنٹ کے اسپیکر کا پرتپاک سلام پیش کرتا ہوں۔

فیصل مقداد نے مزید کہا کہ وہ پورے دل سے پارلیمانی ڈپلومیسی پر یقین رکھتے ہیں؛ بین الاقوامی فورمز میں ایرانی اور شامی پارلیمنٹ کے نمائندوں کی فعال موجودگی کی بدولت اس سفارت کاری نے بہتر رنگ اور ذائقہ اختیار کیا ہے، ایسے اجلاس اور فورمز جن میں ایران اور شام کے نمائندے شرکت کرتے ہیں، تجربات کے تبادلہ کا موقع فراہم کرتے ہیں اور ہمارے دشمنوں، ہماری کامیابیوں اور ہماری ترقی کو دیکھیں گے۔

 انہوں نے مزید کہا کہ شامی فوج کی قربانیوں اور شہداء جیسے شہید سلیمانی، ابومہدی المہندس، حزب اللہ کے شہداء  کے خون کی بدولت عظیم کامیابیاں حاصل ہوئی ہیں جو ایران، شام اور لبنان میں قربانیاں دی ہیں، لیکن ان تمام فتوحات کے باوجود دہشت گردی کیخلاف ہماری جنگ ابھی ختم نہیں ہوئی۔

انہوں نے ملک کے شمال مغرب میں بعض علاقوں پر قبضے کے خاتمے کے لیے شام کی کوششوں پر بھی زور دیا اور کہا کہ شمال مشرقی اور جنوبی شام پر امریکی قبضہ بھی خطرناک ہے اور اسے ختم ہونا چاہیے۔ وہ نرم جنگ کے ذریعے اور خطے میں اپنے اوزاروں اور ان سے منسلک این جی اوز، اقتصادی آلات اور لوگوں کی خریدوفروخت کے ذریعے ہمارے ممالک پر قبضہ کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ امریکی، دہشت گردی کو استعمال کرنے میں ناکامی کے بعد، ممالک میں براہ راست مداخلت اور فوجی اڈے قائم کرنے کے بعد، خطے کے کچھ حصوں کو چھوڑنے پر مجبور ہوئے اور اپنے مقاصد کے حصول کے لیے دوسرے ذرائع کا سہارا لیا۔

فیصل مقداد نے کہا کہ ایران، شام اور دیگر ممالک کے خلاف امریکہ کی غیر انسانی پابندیوں کا مقصد ہمیں گھٹنے ٹیکنا ہے اور وہ اس مقصد کو حاصل کرنا چاہتے ہیں جو وہ فوجی ذرائع سے حاصل نہیں کر سکے۔

شامی وزیر خارجہ نے مزید کہا کہ میں شامی عوام کے ساتھ کھڑے ہونے پر ایرانی عوام کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha