ایران اور پاکستان کا بحری تعاون گہرے اور اسٹریٹجک تعلقات کا باعث ہوگا

بندر عباس، ارنا – ایرانی آرمی کی بحریہ کے ڈپٹی کمانڈر نے کہا ہے کہ ایران اور پاکستان کے مابین بحری تعلقات دو دوست، پڑوسی اور مسلم ممالک کے درمیان گہرے اور اسٹریٹجک تعلقات کا باعث بنیں گے۔

یہ بات کیپٹن قادر وظیفہ نے اتوار کے روز بندرعباس میں ایرانی بحریہ کے پہلے نیول زون میں پاکستانی جنگی بحری جہاز کی آمد کی تقریب میں کہی۔

انہوں نے بتایا کہ یہ بحری تعلقات یقینی طور پر ظاہر کرتے ہیں کہ خطے کی سیکورٹی کو خطے کے ممالک خاص طور پر دوست اور برادر اور مسلم ممالک خود فراہم کر سکتے ہیں۔

انہوں نے مزید بتایا کہ آبنائے ہرمز، خلیج فارس اور بحیرہ عمان میں غیرعلاقائی فورسز کی موجودگی کی کوئی ضرورت نہیں ہے۔

کیپٹن قادر وظیفہ  نے کہا کہ امید ہے کہ یہ تعلقات اور سمندری دورے مزید گہرے ہوتے جائیں گے۔

پاکستانی جہاز کے کمانڈر ایڈمیرل ریحان نے کہا کہ پاکستانی بحریہ تین جنگی جہازوں پر مشتمل ہے جو اب ہم بندر عباس میں داخل ہو چکے ہیں۔

انہوں نے مزید بتایا کہ یہاں ہماری موجودگی دونوں ممالک کے درمیان رابطوں میں اضافہ کرے گی۔

قابل ذکر ہے کہ آج کی صبح پاکستانی بحریہ تین جنگی جہازوں پر مشتمل بندرعباس میں ایرانی بحریہ کے پہلے نیول زون میں لنگرانداز ہوگئی۔ اور 5 سے 8 دسمبر تک (4 دنوں تک) اس بندرگاہ میں موجود ہے۔

رواں سال پاک فوج کا یہ دوسرا دورہ ہبندرعباس ہے۔ پاکستانی بحری بیڑے نے رواں سال 3 سے 6 اپریل تک بندر عباس کا دورہ کیاتھا۔

اس دورے کا مقصد ایران اور پاکستان کے درمیان فوجی اور سفارتی تعلقات کو مضبوط بنانا ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@  

https://twitter.com/IRNAURDU1

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha