دیگر فریقین کو ایران کی تجویز کردہ دستاویزات کا مدلل اور منطقی جواب دینا ہوگا: باقری کنی

ویانا، ارنا- ویانا میں ایرانی مذاکراتی ٹیم کے سربراہ نے جوہری معاہدے کے مشترکہ کمیشن کے اجلاس کا اختتام اور دیگر فریقین کا ایرانی تجویز کردہ دستاویزات کا جائزہ لینے کیلئے اپنے اپنے دارالحکومتوں کی واپسی کے بعد اس بات پر زور دیا کہ توقع کی جاتی ہے کہ وہ ایرانی تجاویز کا مدلل اور منطقی جواب دیں گے۔

رپورٹ کے مطابق، "علی باقری کنی" نے ایران کی واپسی سے پہلے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ مذاکرات کے اس دور میں اسلامی جمہوریہ ایران ایک نئے وفد کی تشکیل کے ساتھ مذاکرات کے میدان میں داخل ہوا جس میں اقتصادی، مالیاتی اور بینکنگ کے شعبے کے ماہرین اور حکام بھی شامل تھے جس سے اسلامی جمہوریہ ایران کا ایک معاہدے تک پہنچنے کے مقصد کے ساتھ مذاکرات کرنے کا عزم ظاہر ہوا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس نکتے کا اثر دوسری فریقین پر بھی پڑا اور ہماری ملاقاتوں میں ہونے والے مذاکرات میں بعض فریقین نے کہا کہ ایرانی نیا مذاکراتی وفد، اسلامی جمہوریہ ایران کے مذاکرات میں شامل ہونے کے عزم کو ظاہر کرتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ دوسرا نکتہ یہ ہے کہ مذاکرات کے اس دور میں اسلامی جمہوریہ ایران نے نئی حکومت کی روشنی میں ایران میں ایک نئی مذاکراتی ٹیم تشکیل دی جس نے مذاکرات کے ایجنڈے میں شامل مسائل پر اپنے خیالات کو تحریری طور پر دیگر فریقین کو پیش کیا۔

باقری کنی نے کہا کہ چونکہ دوسرے فریق کو ان تجاویز کا دستاویزی اور مدلل جواب فراہم کرنے کے لیے اپنے دارالحکومتوں سے مشورہ کرنے کی ضرورت تھی، اس لیے انہوں نے تجویز دی کہ مذاکرات کو کچھ دنوں کے لیے معطل کر دیا جائے تاکہ وہ دارالحکومتوں میں واپس جا سکیں اور ایرانی تجاویز پر دستاویزی اور مدلل جواب فراہم کرنے کی ہدایات حاصل کر سکیں۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے مشترکہ کمیشن کے آخری اجلاس میں بھی بارہا کہا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران اور ہماری مذاکراتی ٹیم اسی وقت میں مذاکرات کو جاری رکھنے کے لیے تیار ہیں۔ تاہم چونکہ وہ اسلامی جمہوریہ ایران کو جواب دینا چاہتے تھے اس لیے انہوں نے یہ درخواست کی اور ہم نے اس بات پر اتفاق کیا کہ وہ اگلے ہفتے کے جوابات تیار کرنے کے لیے اپنے دارالحکومتوں میں جائیں اور ایرانی فریق کے جوابات ہی دیگر فریقین کے درمیان مذاکرات کی بنیاد ہوں گے۔

باقری کنی نے "انہیں ایرانی متن کے مواد کے بارے میں کیا پیغام ملا ہے" کے سوال کے جواب میں کہا کہ یہ درست ہے کہ یورپی جماعتیں ہماری بعض تجاویز سے زیادہ مطمئن نہیں تھیں، لیکن یہ تجاویز دونوں جماعتوں کے درمیان مشترکہ اصولوں پر مبنی تھیں اور اس لیے انہوں نے ان تجاویز کے غیر متعلقہ ہونے پر اعتراض نہیں کیا؛ لیکن انہوں نے کہا کہ یہ ہمارے خیالات سے متفق نہیں ہے۔

باقری نے مزید کہا کہ ہم نے ان سے کہا کہ یہ معمول کی بات ہے اور ہم بات چیت اور مذاکرات میں ایسا مواد اور تجاویز پیش نہیں کریں گے جو آپ کے خیالات کے مطابق ہوں بلکہ ہم ایسے مسائل اٹھاتے ہیں جو ہمارے اپنے خیالات، مفادات اور پالیسیوں سے مطابقت رکھتے ہیں۔ لیکن اہم بات یہ ہے کہ یہ تجاویز، ان اصولوں پر مبنی ہیں جنہیں دوسرے فریق نے بھی قبول کیا ہے۔

اعلی ایرانی سفارتکار کے مطابق ایران کی تجویز کا اہم نکتہ یہ ہے کہ یہ مشترکہ اصولوں پر مبنی ہے اور یہ ظاہر کرتی ہے کہ ہم اپنی رائے پیش کی اور ہم تسلیم کرتے ہیں کہ ہماری تجاویز دوسرے فریقین کے خیالات سے متفق نہیں ہیں؛ لیکن ہمیں کسی معاہدے تک پہنچنے کا سنجیدہ عزم ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایرانی مذاکراتی ٹیم کی خصوصیت یہ ہے کہ سابقہ ٹیموں میں موجود تمام قومی صلاحیتوں کو بروئے کار لایا گیا اور درحقیقت یہ ایک ٹیم ہے جو اسلامی جمہوریہ ایران کی نمائندگی کرتی ہے اور اگرچہ حکومت خارجہ پالیسی کے میدان میں ایک واضح وژن رکھتی ہے لیکن اس نے یہ ظاہر کیا ہے کہ وہ مذاکرات کے میدان میں تمام قومی صلاحیتوں کو بروئے کار لانے کا سنجیدہ وژن رکھتی ہے۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha