ایران UNIDO سے شہد کی مکھیاں پالنے کی صنعت میں تعاون بڑھانے میں دلچسبی رکھتا ہے

تہران، ارنا- ایرانی وزیر زراعت نے کہا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران، اقوام متحدہ کی صنعتی ترقی کی تنظیم UNIDO سے شہد کی مکھیاں پالنے کی صنعت میں تعاون بڑھانے پر تیار ہے۔

ان خیالات کا اظہار "سید جواد ساداتی نژاد" نے آج بروز بدھ کو آسٹریا کی میزبانی میں"2021 تخلیقی معیشت برائے پائیدار ترقی" کے عنوان کے تحت اقوام متحدہ کی صنعتی ترقی کی تنظیم کی 19ویں جنرل اسمبلی کے ورچوئل اجلاس کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایران کی منظور شدہ پالیسیوں میں تخلیقی اور علم پر مبنی صنعتوں کی ترقی اور بین الاقوامی منڈی میں سپلائی کے لیے ایرانی مصنوعات اور خدمات کے فروغ پر زور دیا گیا ہے۔

ساداتی نژاد نے کہا کہ ہمارا عقیدہ ہے کہ ترقی پذیر ممالک میں غربت اور بے روزگاری جیسے موجودہ مسائل پر قابوپانے کے لئے تخلیقی صنعتوں پر توجہ دینا ایک موثر طریقہ ہے؛ نیز یہ سب کے لئے پیداواری اور مہذب روزگار پیدا کرنے اور لوگوں کے معیار زندگی کو خاص طور پر دیہی اور کم آمدنی والے علاقوں میں بہتر بنانے کا ایک مؤثر طریقہ ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایرانی حکومت نے 20 سے زیادہ گھرانے والے تمام شہروں اور دیہاتوں میں مواصلاتی انفراسٹرکچر کو ترقی دے کر تخلیقی معیشت اور ڈیجیٹل ٹیکنالوجیز کو بااختیار بنانے کے لیے موزوں ماحول پیدا کیا ہے۔

ساداتی نژاد نے کہا کہ ہم نے ایرانی محکمہ زارعت اور محکمہ برائے سماجی بہبود سے تعاون کے ساتھ کئی سالوں سے اقوام متحدہ کی صنعتی ترقی کی تنظیم سے ایک مشترکہ تعاون کے فریم ورک کے اندر شہد کی مکھیاں پالنے کی صنعت کی توسیع پر کام کیا ہے اور اب ہم نے اس منصوبے کو تخلیقی معیشت کے فریم ورک میں مکمل کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس پروجیکٹ میں، ملک کے تمام حصوں میں شہد کی مکھیوں کے پالنے والوں کی تربیت اور انہیں بااختیار بنانے اور نئی پیداواری ٹیکنالوجی سے واقفیت اور ویلیو چین کے ساتھ سرگرم کارکنوں کے درمیان نیٹ ورکنگ کے ذریعے، ویلیو ایڈڈ کے ساتھ نئی مصنوعات تیار کی گئی ہیں۔

ایرانی وزیر زراعت نے کہا کہ ایرانی شہد کی مکھیاں پالنے کی صنعت میں تخلیقی تحقیق اور ترقیاتی سرگرمیوں کے ذریعے مصنوعات کی قدر میں 100 گنا اضافہ ہوا ہے۔

ایرانی وزیر زراعت نے کہا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران، اقوام متحدہ کی صنعتی ترقی کی تنظیمسے شہد کی مکھیاں پالنے کی صنعت میں تعاون بڑھانے پر تیار ہے اور  ہم صحت مند اور نامیاتی مصنوعات کی ترقی اور اس صنعت کی تحقیق اور تخلیقی ترقی اور برانڈنگ کی مزید ترقی کے لیے خاص طور پر نئی ڈیجیٹل ٹیکنالوجیز کے فروغ کی حمایت کریں گے۔

واضح رہے کہ اقوام متحدہ کی صنعتی ترقی کی تنظیم کی جنرل اسمبلی کا اجلاس ہر دو سال بعد مختلف موضوعات پر انعقاد کیا جاتا ہے۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ تخلیقی معیشت برائے پائیدار ترقی کے عنوان کے تحت اقوام متحدہ کی صنعتی ترقی کی تنظیم کی 19ویں جنرل اسمبلی کا ورچوئل اجلاس 29 نومبر سے 3 دسمبر تک آسٹریا کی میزبانی میں انعقاد کیا جا رہا ہے۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha