ویانا مذاکرات میں ایرانی وفد ماہرین اقتصاد اور قانونی امور کے سفارتکاروں پر مشتمل ہے

ویانا، ارنا- ایران کیخلاف پابندیوں کی منسوخی کے مذاکرات کے نئے دور کا آج بروز پیر کو ویانا میں اسلامی جمہوریہ ایران اور گروپ1+4 کے درمیان انعقاد کیا جاتا ہے؛ اس مذاکرات میں حصہ لینے والے ایرانی وفد میں شامل ماہرین اقتصاد اور قانونی امور کے سفارتکار، ایران کیخلاف پابندیوں کو اٹھانے کے مقصد پر اپنی پوری توجہ مرکوز کرتے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق، ویانا مذاکرات کے نئے دور کا افتتاح ایرانی مذاکرات کار وفد کے سربراہ "علی باقری کنی" اور یورپی یونین کے ڈپٹی سکرٹری برائے خارجہ پالیسی "انریکہ مورا" جو اس اجلاس کی مشترکہ قیادت کرتے ہیں، کے ذریعے سے ہوگا۔

اس اجلاس کا ایران، چین، فرانس، برطانیہ، جرمنی، یورپی یونین کے وفود کی شرکت سے ویانا کے مقامی وقت کے مطابق، 14 بجے میں کوبورگ ہوٹل میں انعقاد کیا جاتا ہے۔

 ویانا مذاکرات میں ایرانی وفد ،نائب وزیر خارجہ برائے اقتصادی سفارتکاری، نائب وزیر خارجہ برائے قانونی اور بین الاقوامی امور، خارجہ تعلقات کی اسٹریٹجک کونسل کے اقتصادی کمیشن کے چیئرمین، اقتصادی امور اور مالیات کے نائب وزیر اور سرمایہ کاری تنظیم کے ڈائریکٹر جنرل، نائب ایرانی وزیر تیل برائے بین الاقوامی اور تجارتی امور، ایگزیکٹو بورڈ کے رکن اور اسلامی جمہوریہ ایران کے مرکزی بینک کے نائب سربراہ برائے زرمبادلہ اور بین الاقوامی امور کے سفارتکاروں پر مشتمل ہیں۔

واضح رہے کہ حالیہ ونوں کے دوران میں بھی ایرانی وفد اور دیگر وفود کے درمیان باہمی اور کثیر الجہتی غیر سرکاری ملاقاتیں ہوئیں؛ گزشتہ روز کے دوران، نائب ایرانی وزیر خارجہ برائے سیاسی امور علی باقری کنی نے روس اور چین کے وفود کے سربراہوں سے ایک سہ فریقی اجلاس میں ہونے والے مذاکرات کے اہم ترین مسائل پر تبادلہ خیال کیا۔

نیز کل رات، ڈاکٹر باقری اور انریکہ مورا نے ایک دو طرفہ ملاقات میں مذاکرات کے انتظام کا جائزہ لینے سمیت پابندیوں کے معاملے کو ترجیح دینے کی ضرورت پر زور دیا۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha