ایک آواز کیساتھ بین الاقوامی برادری کو افغانستان پر ایک مشترکہ پیغام بھیجنے کی امید کرتے ہیں: ایران

تہران، ارنا - ایران کے وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ ہم امید کرتے ہیں کہ آج کے اجلاس میں بین الاقوامی برادری اور خطے کے ممالک اور افغانستان کے اندر کو ایک متفقہ پیغام دیں گے۔

یہ بات "حسین امیرعبداللہیان" نے بدھ کے روز تہران میں افغانستان کے ہمسایہ ممالک کے وزرائے خارجہ کے دوسرے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔
انہوں نے کہا کہ افغان شہریوں اور ملکی سرحدوں کی حفاظت کابل میں نگراں حکومت پر ہے۔
امیرعبداللہیان نے کہا کہ ایران افغانستان میں ہمہ گیر حکومت کی حمایت کرتا ہے، ہر ملک کو افغانستان کو موجودہ صورتحال سے نکالنے میں مدد کرنی چاہیے۔
انہوں نے دوسرے ممالک کی خود مختاری اور علاقائی سالمیت کے احترام اور عدم مداخلت کے اصول کو اسلامی جمہوریہ ایران کی خارجہ پالیسی کے بنیادی اصولوں میں سے ایک قرار دیا۔
ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ افغانستان کے موجودہ بحران سے نکلنے کے لیے اندرونی ہم آہنگی اور ملک کی تمام صلاحیتوں اور صلاحیتوں کو بروئے کار لانے کی ضرورت ہے۔
انہوں نے تمام پڑوسی ممالک اور عالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ وہ افغانستان میں انسانی صورتحال، دہشت گردی کے پھیلاؤ، منشیات کی اسمگلنگ، انسانی حقوق کی صورتحال اور خواتین پر خصوصی توجہ دیں۔
امیرعبداللہیان نے اس بات پر زور دیا کہ افغانستان میں موجودہ مسائل کی جڑیں بڑی حد تک غیر ملکی مداخلت سے ہیں اور امریکہ کو گزشتہ دو دہائیوں کے دوران افغانستان میں رونما ہونے والے سانحات کی ذمہ داری قبول کرنی چاہیے۔
ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ امریکا کو افغانستان کو بحران سے نکالنے اور لوگوں کی تکالیف کو کم کرنے کے لیے عالمی برادری کی کوششوں کے علاوہ سنجیدہ اقدامات کرنے چاہییں۔
امیرعبداللہیان نے زور دیا کہ عظیم افغان قوم کی جدوجہد کے نتیجے میں امریکی افواج کا افغانستان سے انخلاء ہوا۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha