ہم نتائج پر مبنی مذاکرات کیلئے تیار ہیں: ایرانی وزیر خارجہ

تہران، ارنا- اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ ہم امریکی وعدہ خلافی اور یورپ کیجانب سے کوئی اقدامات نہ اٹھانے کے باوجود اپنے اصولوں کے مطابق سفارتکاری پر پابند ہیں اور ایرانی عوام کے مفادات کی فراہمی پر مبنی نتیجہ خیر مذاکرات کیلئے تیار ہیں۔

ایرانی محکمہ خارجہ کے شعبہ تعلقات عامہ کے مطابق، "حسین امیر عبداللہیان" نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے سالانہ اجلاس کی سائڈ لائن میں کل کی رات کو امریکی محققین، پروفیسرز اور تھنک ٹینکس کے سینئر نمائندوں سے ایک اجلاس میں اسلامی جمہوریہ ایران کی نئی حکومت کی خارجہ پالیسی کی وضاحت کرتے ہوئے مختلف مسائل پر ان کے سوالات بشمول اسلامی کی خارجہ اور علاقائی پالیسی اور جوہری معاہدے کے مستقبل کے جوابات دیئے۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ اسلامی جمہوریہ ایران کی نئی حکومت کی خارجہ پالیسی میں ہمسایہ اور ایشیائی ممالک سے تعلقات کا فروغ، ایک اہم ترجیح ہے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے علاقائی مسائل بشمول افغانستان، یمن، شام، بحرین اور دیگر علاقوں سے متعلق ایران کے موقف کی وضاحت کی۔

امیر عبداللہیان نے کہا کہ اگرچہ نئی حکومت نے اپنے پڑوسیوں اور ایشیائی ممالک کیساتھ تعلقات استوار کرنے کو ترجیح دی ہے تاہم وہ اپنی خارجہ پالیسی میں توازن برقرار رکھے گی۔

اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ ہم امریکی وعدہ خلافی اور یورپ کیجانب سے کوئی اقدامات نہ اٹھانے کے باوجود اپنے اصولوں کے مطابق سفارتکاری پر پابند ہیں اور ایرانی عوام کے مفادات کی فراہمی پر مبنی نتیجہ خیر مذاکرات کیلئے تیار ہیں۔

انہوں نے ایک بار پھر افغانستان سے متعلق ایران کے موقف کو دہراتے ہوئے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران، افغانستان میں ایک جامع حکومت کا قیام و نیز علاقے میں دہشتگردی کاروائیوں کی روک تھام پر زور دیتا ہے۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha