ایرانی سفیر کا علاقائی بحرانوں کے حل کیلیے تہران اور اسلام آباد کے باہمی تعاون پر زور

اسلام آباد، ارنا - پاکستان میں اسلامی جمہوریہ ایران کے سفیر نے خطے خاص طور پر افغانستان کی صورتحال کو مستحکم کرنے کیلیے دونوں ہمسایہ ممالک کے مشترکہ نقطہ نظر پر زور دیتے ہوئے علاقائی بحرانوں کے حل کیلیے تہران اور اسلام آبادکے درمیان باہمی تعاون کے فروغ پر زور دیا۔

یہ بات سید محمدعلی حسینی آج بروز منگل اسلام آباد شہر میں پاکستان مسلح افواج سے وابستہ نیشنل ڈیفنس یونیورسٹی (این ڈی یو) کے طلباء کے ایک اجتماع میں ایران پاکستان تعلقات کے بارے میں گفتگو کرتے ہوئے کہی۔

انہوں نے خطے خاص طور پر افغانستان کی صورتحال کو مستحکم کرنے کیلیے دونوں ہمسایہ ممالک کے مشترکہ نقطہ نظر پر زور دیتے ہوئے کہا کہ علاقائی بحرانوں سے نکلنے کا راستہ تہران اور اسلام آباد کے درمیان تعاون کو بڑھانا ہے۔

انہوں نے پاکستان کے ساتھ دوطرفہ تعلقات اور درپیش مواقع ، کورونا چیلنج ، عالمی اور علاقائی تبدیلیوں اور دو پڑوسیوں پر ان کے اثرات ، افغان بحران ، بڑی طاقتوں کی پالیسی اور فلسطین اور یمنی جنگ کے بارے میں اسلامی جمہوریہ ایران کے تازہ ترین موقف اور خیالات پر روشنی ڈالی۔

حسینی نے اسلامی جمہوریہ ایران اور پاکستان کے مابین تاریخی ، ثقافتی اور لسانی مشترکات کی اہمیت کا حوالہ دیتے ہوئے پاکستانی سامعین کو سیاسی، سفارتی ، دفاعی، سیکورٹی، اقتصادی اور تجارتی تعلقات کی ترقی کی وضاحت کی۔

ایرانی سفیر کا علاقائی بحرانوں کے حل کیلیے تہران اور اسلام آباد کے باہمی تعاون پر زور

ایرانی سفیر نے بتایا کہ ایران اور پاکستان کے درمیان تاریخی، ثقافتی۔ مذہبی مشترکات دونوں ممالک کے درمیان دوستی کی مضبوطی کا باعث ہے۔

حسینی نے کہا کہ ایرانی عوام پاکستانی عوام سے بھی محبت کرتے ہیں اور ہر سال ایران پاکستانی سیاحوں اور زائرین کی ایک بڑی تعداد کی میزبانی کرتا ہے۔

ایرانی سفیر نے بتایا کہ تہران اور اسلام آباد مشترکہ سیاسی نقطہ نظر اپنانے اور قریبی سفارتی تعلقات کے ساتھ علاقائی مسائل اور بحرانوں کو حل کرسکتے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ ایران اور پاکستان کے پاس فوجی اور سیکورٹی تعاون کے شعبے میں اعلیٰ صلاحیتیں ہیں جو خطے کی سلامتی کو مؤثر طریقے سے یقینی بنا سکتی ہیں۔

انہوں نے دونوں ممالک کے پاس امن قائم کرنے ، دہشت گردی سے لڑنے ، منظم یافتہ جرائم سے نمٹنے ، بارڈر کی سیکورٹی ، اور منشیات اور انسانی اسمگلنگ کی روک تھام کے شعبوں میں قیمتی تجربات ہیں جن شعبوں میں دونوں ممالک کے درمیان قریبی تعاون ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

https://twitter.com/IRNAURDU1

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha