انڈونیشیا نے خواتین اور کنبہ کے شعبے میں ایران کے ساتھ تجربات کے تبادلے کا مطالبہ کیا

تہران، ارنا - انڈونیشیا کی وزیر برائے خواتین کے امور نے ، گھروں کو بااختیار بنانے کے شعبے میں ایران کے تجربات کی تعریف کرتے ہوئے اس شعبے میں دونوں ممالک کے ماہرین کے مابین تجربات کی منتقلی کا مطالبہ کیا۔

 یہ بات محترمہ آی گوستی آیو بینتنگ دارماواتی نے منگل کے روز "گھریلو خواتین کو بااختیار بنانا"  کے عنوان سے منع‍قدہ بین الاقوامی ویبنار سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔

 انہوں نے خاتون نائب ایرانی صدر برائے خواتین اور خاندانی امور کے تعاون کو سراہتے ہوئے گھریلو خواتین کو بااختیار بنانے کے شعبے میں ایران کی کوششوں کی تعریف کی۔

انہوں نے خواتین کو بااختیار بنانے اور بچوں کی حمایت کے شعبے میں ایران اور انڈونیشیا کے مابین تجربات کے تبادلے کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے اس شعبے میں دونوں ممالک کے عہدیداروں اور ماہرین کے مابین تبادلہ خیال  کے فروغ کا مطالبہ کیا۔

انہوں نے کورونا کی وجہ سے گھریلو معیشت خاص طور پر خواتین کی معیشت کو خطرے میں ڈالنے کا حوالہ دیتے ہوئے اس گروپ اور طبقے کی حمایت انڈونیشیا کی حکومت کے ایجنڈے پر ہے۔

انڈونیشیا کی وزیر  نے کہا کہ کورونا کے دوران خواتین کی معاشی حمایت انڈونیشیا کیلیے ایک اہم مسئلہ ہے۔

یہ ویبنار آج بروز منگل خاتون نائب ایرانی صدر برائے خواتین اور خاندانی امور 'معصومہ ابتکار' کی تقریر کے ساتھ منعقد ہوا۔

اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

https://twitter.com/IRNAURDU1

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha