ایران اور پاکستان کے درمیان تین زمینی سرحدوں کو مسافروں پر بند کردیا گیا

زاہدان، ارنا- پاکستان سے ملحقہ سرحدی صوبے سیستان و بلوچستان کے ڈپٹی گورنر جنرل برائے سیکورٹی امور نے کہا کہ کورونا وائرس سے مزید پھیلاؤ کی روک تھام کے سلسلے میں پاکستان سے تین زمینی سرحدوں کو مسافروں کی آمد و رفت پر ثانوی اطلاع تک بندکردیا گیا ہے۔

ان خیالات کا اظہار "محمد ہادی مرعشی" نے بدھ کے روز ارنا نمائندے کیساتھ گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ کورونا وبا کے پھیلاؤ میں اضافے کے پیش نظر صوبے سیستان و بلوچستان اور پاکستان کے درمیان تین سرحدوں کو ثانوی اطلاع تک مسافروں کی آمد و رفت پر بند کر دیا گیا ہے۔

مرعشی نے کہا کہ صوبے سیستان و بلوچستان اور پاکستان کے درمیان مصنوعات کی برآمدات اور درآمدات کا سلسلہ بغیر کسی مسئلے کے بدستور جاری ہے لیکن ایران میں ڈرائیورز کے داخلے سے قبل ان سے کورونا ٹیسٹ کیا جاتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس صوبے کی سرحدوں سے پاکستان کو برآمدات اور درآمدات کا عمل، صحت کے پروٹوکول کی تعمیل اور کورونا پابندیوں کو مد نظر رکھتے ہوئے، جاری ہے۔

مرعشی نے کہا کہ آج، صحت پروٹوکول کے مطابق میرجاوہ بارڈر سے لگ بھگ 400 ٹرکوں نے مصنوعات کو درآمد اور برآمد کیا۔

انہوں نے کہا کہ تجارت کے حوالے سے صرف صوبے سیستان و بلوچستان کے شمال میں واقع میلک سرحد کو تجاروں کے درمیان اختلافات کی وجہ سے بند کر دیا گیا تھا لیکن اب یہ مسئلہ حل ہوگیا ہے اور اس بارڈر سے برآمد اور درآمد کا سلسلہ جاری ہے۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha