امریکہ اب ایرانی عوام سے جبر اور پابندیوں کی زبان سے بات نہیں کرسکتا

تہران، ارنا- زمبابوے کی خاتون وزیر برائے انفارمیشن، اشتہارت اور پپلک میڈیا نے اس بات پر زور دیا کہ نئی امریکی انتظامیہ کو پتہ چل گیا ہے کہ وہ اب طاقت اور پابندیوں کی زبان سے ایرانی عوام سے بات نہیں کرسکتی ہے اور انہیں ایران کیساتھ مذاکرات کرنا ہوگا جس سے بین الاقوامی سطح پر ایران کی طاقت ظاہر ہوتی ہے۔

رپورٹ کے مطابق، زمبابوے میں تعینات اسلامی جمہوریہ ایران کے سفیر "عباس نوازانی" نے آج بروز منگل کو زمبابوے کی خاتون وزیر برائے انفارمیشن، اشتہارت اور پپلک میڈیا "مونیکا موتسوآنگوا" سے ملاقات کی۔

اس ملاقات میں دونوں فریقین نے باہم دلچسبی امور، علاقائی اور بین الاقوامی مسائل بشمول ایران کیخلاف امریکی ظالمانہ پابندیوں پر تبادلہ خیال کیا۔

اس موقع پر زمبابوے کی خاتون وزیر برائے انفارمیشن، اشتہارت اور پپلک میڈیا نے اسلامی جمہوریہ ایران کیخلاف امریکی غیرقانونی اور ظالمانہ پابندیوں کی مذمت کرتے ہوئے اس عزم کا اعادہ کیا کہ ان کا ملک اس مشکل صورتحال میں بدستور ایرانی عوام کی حمایت کرے گا۔

انہوں نے امریکی ظالمانہ پابندیوں اور زیادہ سے زیادہ دباؤ ڈالنے کیخلاف ایرانی عوام کی مزاحمت کو سراہا۔

موتسوآنگوآ نے امریکی پابندیوں کیخلاف ایرانی مزاحمت پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ اب پوری دنیا دیکھ رہی ہے کہ  نئی امریکی انتظامیہ کو پتہ چل گیا ہے کہ وہ اب طاقت اور پابندیوں کی زبان سے ایرانی عوام سے بات نہیں کرسکتی ہے اور انہیں ایران کیساتھ مذاکرات کرنا ہوگا جس سے بین الاقوامی سطح پر ایران کی طاقت ظاہر ہوتی ہے۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha