ایران کی بھارت کو جاسک بندرگاہ میں سرمایہ کاری کرنے کی پیش کش

دہلی نو، ارنا- ایران نے بھارت کو یہ پیش کش کی ہے کہ وہ جاسک بندرگاہ میں ایک اسٹریٹجک آئل اسٹوریج بیس کے طور پر سرمایہ کاری کرنے سمیت گیس پائپ لائن کی تعمیر سے اپنی توانائی کی بڑھتی ہوئی ضروریات کو پورا کرسکتا ہے۔

تفصیلات کے مطابق، اس تجویز کی "ایران- بھارت تعلقات کا مستقبل" کے تحت منعقدہ ایک گول میز کے دوران، بھارت میں تعینات ایرانی سفیر "علی چگنی" کیجانب سے پیش کی گئی؛ اس گول میز کا رواں ہفتے کے دوران بھارتی تیلوتاما فاؤنڈیشن کے زیر اہتمام میں انعقاد کیا گیا تھا۔

اکانمک ٹائمز نے اس حوالے سے کہا ہے کہ ایرانی سفیر نے جاسک بندرگاہ کی اہمیت کا ذکر کرتے ہوئے اس پورٹ کے توانائی شعبے میں بھارت اور چین کی سرمایہ کاری کا خیر مقدم کیا ہے۔

انہوں نے یہ تجویز بھی پیش کی کہ بھارت، جاسک بندرگاہ پر تیل کے اسٹریٹجک ذخائر تعمیر کرسکتا ہے اوراس بندرگاہ سے گیس پائپ لائن بنا کر اپنی توانائی کی ضروریات کی فراہمی کو یقینی بناسکتا ہے۔

چگنی نے مستقبل قریب میں اور جوہری مذاکرات کے اختتام کے بعد، ایران کیخلاف عائد امریکی پابندیوں کی منسوخی کے امکان پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ بھارت کیلئے ایران کے توانائی شعبے میں سرمایہ کاری کے بے پناہ مواقع ہیں۔

ایرانی سفیر نے بھارت کو چابہار پورٹ فری ٹریڈ زون میں سرمایہ کاری کرنے کی بھی دعوت دی۔

 انہوں نے چابہار بندرگاہ کے ذریعے جنوبی اور وسطی ایشیاء کو جوڑنے کیلئے ایران، بھارت، افغانستان اور ازبکستان کی ٹرانسپورٹ راہداری کی صلاحیت کا ذکر کیا۔

ڈاکٹر علی چیگنی نے یہ بھی تجویز پیش کی کہ بھارت چابہار فری ٹریڈ زون میں آزادانہ طور پر یا ایرانی کمپنیوں کے تعاون سے پیٹرو کیمیکل کمپنی اور پیٹروکیمیکل کھاد بنانے کے منصوبوں پر عمل درآمد کرسکتا ہے۔

واضح رہے کہ بھارت اور ایران کے درمیان مشترکہ منصوبوں میں سے ایک چابہار بندرگاہ کو روس اور وسطی ایشیاء کیساتھ تجارت کی وسعت دینے کے مقصد سے شمالی جنوبی بین الاقوامی ٹرانسپورٹ راہداری سے منسلک کرنے کا ہے۔

ایران کی بھارت کو جاسک بندرگاہ میں سرمایہ کاری کرنے کی پیش کش

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha