غزہ میں ہونے والے بحران عرب حکمرانوں اور صیہونیوں کے مابین سمجھوتہ کا نتیجہ ہے

اسلام آباد، ارنا - پاکستانی سیاسی تجزیہ کار اور یونیورسٹی کی پروفیسر برائے بین الاقوامی تعلقات نے صہیونی خلاف ورزیوں پر امریکی خاموشی پر تنقید کرتے ہوئے اسرائیلی جارحیت پر حماس کے ردعمل اور فلسطینی مزاحمت کے لئے ایران کی حمایت کی تعریف کی۔

بہ بات محترمہ خاتون ہما بقایی نے منگل کے روز ارنا کے ساتھ خصوصی انٹرویو دیتے ہوئے کہی۔

انہوں نے صہیونی خلاف ورزیوں کے سامنے امریکی خاموشی پر تنقید کرتے ہوئے اسرائیلی جارحیت پر حماس کے ردعمل اور فلسطینی مزاحمت کے لئے ایران کی حمایت کی تعریف کی۔

انہوں نے کہا کہ آج ہم غزہ میں جو کچھ دیکھ رہے ہیں وہ تل ابیب کے ساتھ عرب حکمرانوں کے سمجھوتے کا نتیجہ ہے۔

بقایی نے بتایا کہ فلسطین میں ہونے والے بحران اور غزہ کی پٹی میں تشدد کے نئے دور کا آغاز ، قابض اسرائیلی حکومت کےساتھ خطے کے کچھ عرب ممالک کے تعلقات کو معمول پر لانے کے سوا کچھ نہیں ہے اور ہم اس صدی کے ڈیل کے نتائج کو دیکھ رہے ہیں۔

سینئر پاکستانی ماہر نے کہا کہ اسرائیلی جارحیت اور قانون کی خلاف ورزی پر امریکہ کی خاموشی حیرت انگیز ہے

انہوں نے کہا کہ جوبایڈن نے کہا کہ صہیونی فوج کی جارحیت دفاع کا حق ہے اور انہوں نے اپنے اس استدلال کے ذریعے اسرائیل کی جانب سے بین الاقوامی قوانین کی واضح خلاف ورزی کی حقیقت کو مکمل طور پر نظر انداز کردیا۔       

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha