ایڈیشنل پروٹوکول کا از سر نو نفاذ کیلئے ایران کیخلاف پابندیوں کی منسوخی کی ضرورت ہے

تہران، ارنا- نائب ایرانی وزیر خارجہ برائے سیاسی امور نے اس بات پر زور دیا کہ ایڈیشنل پروٹوکل کا از سرنو نفاذ کیلئے ایران کیخلاف عائد پابندیوں کو اٹھانے کی ضرورت ہے اور ہم 22 مئی سے پہلے ان پابندیوں کی منسوخی کا مطالبہ کرتے ہیں۔

ان خیالات کا اظہار "سید عباس عراقچی" نے آج بروز بدھ کو ایک ٹوئٹر پیغام میں کیا۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ایڈیشنل پروٹوکل کا از سر نو  نفاذ کیلئے ایران کیخلاف عائد پابندیوں کو اٹھانے کی ضرورت ہے اور ہم 22 مئی سے پہلے ان پابندیوں کی منسوخی کا مطالبہ کرتے ہیں؛ البتہ اگر اس کا امکان ہو۔

عراقچی نے کہا کہ ہم اس حوالے سے بہت ہی سنجیدہ ہیں اور اگر پابندیوں کی منسوخی ہوجائے تو ہم کل ہی سے جوہری معاہدے کے بھر پور نفاذ پر تیار ہیں۔

واضح رہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران نے مارچ مہینے کے دوران، پارلیمنٹ کی منظوری سے ایران کیخلاف امریکی یکطرفہ پابندیوں اور 1+4 گروہ کے رکن ممالک کیجانب سے کوئی عملی اقدام نہ اٹھانے کی وجہ سے ایڈینشل پروٹوکول پر رضاکارانہ عمل درامد کو روک دیا۔

اس کے علاوہ ایران نے مئی 2019 سے پانج مرحلوں کے دوران، اپنے جوہری وعدوں کے کچھ حصوں پر عمل درآمد کو روک دیا اور پھر ایران نے جوہری معاہدے سے متعلق کسی بھی تکنیکی اور فنی اصول پر قائم نہ رہنے کا اعلان کیا۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران نے بارہا کہا ہے کہ اگر جوہری معاہدے کے فریقین اپنے وعدوں پر پورا اتریں تو ایران بھی جوہری معاہدے سے متعلق اپنے وعدوں کو پوری طرح نبھائے گا اور پچھلے کی صورتحال میں واپس آئے گا۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha