پارلیمانی اسمبلیاں صہیونی جرائم کے فوری خاتمے پر اقدامات اٹھائیں: ایرانی اسپیکر

تہران، ارنا- ایرانی پارلیمنٹ کے اسپیکر نے اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل سمیت اسلامی ممالک اور بعض دیگر ملکوں کی پارلیمانوں کے سربراہوں کے نام میں ایک خط میں مجسد الاقصی میں نمازیوں کیخلاف صہیونی فوجیوں کے حالیہ حملے کی شدت سے مذمت کی۔

"محمد باقر قالیباف" نے اس خط میں مزید کہا ہے کہ جس طرح آپ جانتے ہیں؛ ناجائز صہیونی ریاست نے 7 مئی 2021ء کو مسجد اقلاصی میں درجنوں نہتے فلسیطنی شہری بشمول خواتین اور بچوں کو عبادت کے جرم میں شہید اور زخمی کیا ہے۔

انہو نے کہا کہ صہیونی ریاست کے اس طرح کے اقدامات اور جنگی جرائم کا تسلسل، بین الاقوامی قانون اور انسانہ دوستانہ حقوق کی کھلی خلاف ورزی ہے۔

قالیباف نے کہا کہ اجتماعی تقاریب بشمول مذہبی تقاریب کا انعقاد، بین الاقوامی قوانین کے سیاسی- شہری حقوق کے عین مطابق ہے۔

ایرانی اسپیکر نے مزید کہا کہ اس کے علاوہ، مسجد اقصی کے مقدس مقام پر عبادت، فلسطینیوں کے بنیادی حقوق میں سے ایک ہے اور ان کے اظہار رائے کی آزادی اور اجتماعی تقاریب کے انعقاد کا ایک لازمی جزو ہے، جس کی صیہونی ریاست نے بدستور خلاف ورزی کی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ قابض صہیونی ریاست نے سات دہائیوں سے اپنے جرائم بشمول تاریخی محلے شیخ جراح پر قبضہ، نسلی صفائی، غیر قانونی قتل اور گرفتاری، مسجد الاقصی میں نمازیوں کیخلاف مسلسل حملے، غزہ پٹی کی ناکہ بندی کا تسلسل، کورونا ویکسین کی تقسیم میں نسلی نژادی پالیسی اپنانے کا سلسلہ جاری رکھا ہے اور جب تک بین الاقوامی تنظیمیں اس کے جرائم کیخلاف مناسب کاروائی نہ کریں تو وہ اپنے جرائم کا سلسلہ جاری رکھے گی۔

انہوں نے مسجد الاقصی کی توہین کو عالمی امن و سلامتی کیلئے خطرہ قرار دیتے ہوئی اسلامی اور غیر اسلامی پارلیمانوں اور بین الاقوامی تنظیموں سے ناجائز صہیونی ریاست کے جرائم کے خاتمے پر فوری اقدامات اٹھانے کا مطالیہ کیا۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha