فلسطینی مسئلے کا واحد منصفانہ حل استصواب رائے کا انعقاد ہے: ظریف

تہران، ارنا- ایرانی وزیر خارجہ نے فلسطینی مسئلے کے واحد حل کو استصواب رائے کا انعقاد قرار دیتے ہوئے فلسطینی عوام کے حق خود ارادیت پر زور دیا۔

ان خیالات کا اظہار "محمد جواد ظریف" نے آج بروز منگل کو ایک ٹوئٹر پیغام میں کیا۔

انہوں نے کہا کہ مسجد الاقصی کیخلاف ناجائز صہیونی ریاست کے حالیہ حملوں میں نمازیوں کی شہادت اور مقدسات کی توہین، اس قابض ریاست کی نسل پرستانہ اور مجرمانہ نوعیت کی سب سے بڑی وجہ ہے جس نے اس علاقے سے سکون، چین اور سلامتی کو چین لیا ہے۔

ایرانی وزیر خارجہ نے فلسطینی مسئلے کے واحد حل کو استصواب رائے کا انعقاد قرار دیتے ہوئے فلسطینی عوام کے حق خود ارادیت پر زور دیا۔

واضح رہے کہ ناجائز صہیونی ریاست کی فلسطین کیخلاف حالیہ جارحیت میں 25 نہتے شہری بشمول 9 بچے شہید ہوگئے؛ اور فلسطینی مزاحتی فرنٹ نے بھی اس حملے کی جوابی کاروائی میں تل ابیب اور بعض دیگر شہروں بشمول عسقلان کو میزائل کا نشانہ بنایا۔

 یہ بات قابل ذکر ہے کہ ایرانی وزیر خارجہ نے ایک اور ٹوئٹر پیغام میں امریکی کوسٹ گارڈ کو مخاطب کرتے ہوئے ان سے کنایتا پوچھا ہے کہ آپ کو واضح طور پر کس کے ساحل کا "تحفظ" کرنا ہوگا؟

خیال رہے کہ امریکی نیوی نے حالیہ دنوں میں اس بات کا دعوی کیا ہے کہ پاسداران اسلامی انقلاب کے کچھ جہازوں نے آبنائے ہرمز میں موجود امریکی جہازوں کے قریب ہوگئے تھے اور امریکی نیوی کے اہلکار ان سے بچنے کیلئے 30 گولیاں چلائے ہیں۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha