جوہری معاہدے کے عین مطابق پر عمل کرنا چاہتے ہیں، نہ ایک لفظ کم نہ ایک لفظ زیادہ 

تہران، ارنا – ایرانی صدر نے کہا کہ آج سب جانتے ہیں کہ ایٹمی پروگرام کے مسئلے کا حل اس کا نفاذ ہے جوہری معاہدے پر اچھی طرح عمل درآمد ہونا چاہئے۔  ہم جوہری معاہدے کے عین مطابق پر عمل کرنا چاہتے ہیں ، نہ ہی ایک لفظ کم اور نہ ہی ایک لفظ زیادہ۔

 یہ بات حسن روحانی نے بدھ کے روز کابینہ کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔

انہوں نے کہا کہ ہم جوہری معاہدے کا نفاذ چاہتے ہیں، نہ ایک لفظ کم نہ ایک لفظ زیادہ ۔ ایک بڑا لفظ ، چھوٹا لفظ نہیں۔ البتہ ہمارے مطالبات ہیں اور انھیں بعد میں اٹھائیں گے۔ ان 4 سالوں میں ہم پر سینکڑوں اربوں ڈالر کا نقصان ہوا ہے۔ اب اس جوہری معاہدے کو لاگو کیا جانا چاہئے۔ ہم جوہری پلس کا معاہدہ نہیں چاہتے ہیں۔           

انہوں نے اس سلسلے میں تین مراحل کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ اس کام کے تین مراحل ہیں ، پہلا مرحلہ پابندیوں کے خاتمے سے متعلق ہے ، جو امریکہ کی ذمہ داری ہے۔ انہیں لازمی طور پر تمام پابندیاں ختم کردینا چاہیے۔

روحانی نے کہا کہ صرف یہ کہنا کافی نہیں ہے کہ ہم پابندیاں ختم کردیں گے۔ انہیں کاغذات پر یہ اشارہ کرنا ہوگا کہ کونسی پابندیاں ختم کی جائیں گی۔ انہیں لازمی طور پر بتانا چاہئے کہ پابندیاں کس طرح ختم کی جائیں گی۔

انہوں نے کہا کہ پابندیاں ختم ہونے کے بعد ایران تصدیق کرے گا اور یہ کام  زیادہ پیچیدہ اور لمبا نہیں ہوگا۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

https://twitter.com/IRNAURD

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha