پابندیاں اور تخریب کاری امریکہ کو مذاکرات کا موقع فراہم نہیں کرے گا:ظریف

تہران،ارنا- ایرانی وزیر خارجہ نے کہا کہ ہمیں جوہری وعدوں کی واپسی کی کوئی پریشانی نہیں ہے اور امریکیوں کو یہ جان لینا چاہئے کہ نہ پابندی ہے اور نہ ہی تخریب کاری انہیں مذاکرات کے اوزار فراہم کرے گی اور ان اقدامات سے ہی صورتحال مزید مشکل ہوگی۔

یہ بات محمد جواد ظریف نے  منگل کے روز  ایران کے دورے پر آئے ہوئے روسی وزیر خارجہ سرگئی لاوروف کے ساتھ مشترکہ پریس کانفرنس میں گفتگو کرتے ہوئے کہی۔
انہوں نے نطنز کی تخریب کاری میں روس کی موقف کی تعریف کرتے ہوئے دونوں ممالک کے درمیان باہمی تعلقات کے فروغ پر زور دیا۔
انہوں نے کہا کہ ہمیں جوہری وعدوں کی واپسی کی کوئی پریشانی نہیں ہے اور امریکیوں کو یہ جان لینا چاہئے کہ نہ پابندی ہے اور نہ ہی تخریب کاری انہیں مذاکرات کے اوزار فراہم کرے گی اور ان اقدامات سے ہی صورتحال مزید مشکل ہوگی۔

ظریف نے کہا کہ روس ، اسلامی جمہوریہ ایران کے لئے ایک اہم علاقہ ہے جو اسلامی جمہوریہ ایران کے ساتھ سیاسی ، ثقافتی ، معاشی ، سلامتی اور اسٹریٹجک تعلقات ہیں۔

انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک کے رہنماؤں کے فیصلوں کی بنیاد پر ،دوطرفہ اور علاقائی تعاون جاری ہے اور یہ تعاون پہلے سے کہیں زیادہ وسیع اور اسٹریٹجک ہے۔

ظریف نے کہا کہ ہمیں خوشی ہے کہ خطے میں ہمارا تعاون ہونے والی خونریزی کے روکنے، دہشت گردی اور انتہا پسندی کے خلاف جنگ  اور امن و سلامتی کے مفاد میں ہے۔

وزیر خارجہ نے نطنز کی جوہری تنصیبات میں تخریب کاری سے متعلق روس کی مضبوط پوزیشن پر شکریہ ادا  کرتے ہوئے کہا کہ اس تعاون کو جاری رکھنا ضروری ہے اور امریکہ اپنی ذمہ داریوں کی تکمیل میں رکے بغیر تمام پابندیاں ختم کردے ، اور ایران دیانتداری کی تصدیق کے بعد اپنے اقدامات کرے گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ جیسا کہ سپریم لیڈر نے کہا ہے ہمیں جوہری وعدوں کو پورا کرنے میں کوئی حرج نہیں ہے لیکن امریکیوں کو یہ جاننے کی ضرورت ہے کہ پابندیاں اور تخریب کارانہ اقدام مذاکرات کے لیے موقع فراہم نہیں کرے گا اور  یہ صرف ان کے لئے ہی اس صورتحال کو مزید مشکل بنادے گا۔

انہوں نے یورپ کے حالیہ نقطہ نظر اور اقدامات  کے بارے میں ایک اور سوال کے جواب میں کہا کہ حالیہ برسوں میں یوروپی یونین اپنی ذمہ داریوں کو پورا کرنے میں ناکامی اور امریکی دباؤ کے سامنے ہتھیار ڈالنے سے آہستہ آہستہ بین الاقوامی سطح پر اپنی ساکھ کو کھو دے گی۔

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha