چین کے ساتھ تعلقات ایران کے لئے اہم اور اسٹریٹجک ہیں: صدر روحانی

تہران، ارنا -  ایرانی صدر نے چین کے ساتھ تعلقات کو اسلامی جمہوریہ ایران کے لئے اسٹریٹجک اور اہم قرار دیتے ہوئے کہا کہ طویل المدتی تعاون کے لئے دونوں ممالک کی دلچسبی کے پیش نظر سیاسی اور اقتصادی سمیت تمام شعبوں میں تعلقات کے فروغ پر زور دیا۔

یہ بات حسن روحانی نے آج بروز ہفتہ چینی وزیر خارجہ کےساتھ ایک ملاقات کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کہی۔

انہوں نے تہران اور بیجنگ کے درمیان بہت اچھے تعلقات ہیں اور بین الاقوامی امور میں دونوں ممالک کا مشترکہ موقف ان تعلقات کی مطلوبہ سطح کا ثبوت ہیں۔

روحانی نے دونوں ممالک کے مابین نئے سفارتی تعلقات کی 50 ویں سالگرہ کے ساتھ ساتھ ایران اور چین کے مابین دوطرفہ ، علاقائی اور بین الاقوامی تعاون کا ذکر کرتے ہوئے صدر نے اہم ترقیاتی منصوبوں پر معاہدوں کے نفاذ کو تیز کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔

انہوں نے جوہری معاہدے اور امریکی یکطرفہ پن اور جبر سے نمٹنے سمیت بین الاقوامی فورمز میں بیجنگ کی ایران سے حمایت کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ ایٹمی معاہدے کے نفاذ اور یورپی ممالک کے ذریعہ جوہری ذمہ داریوں کے نفاذ کے لئے دونوں ممالک کے درمیان تعاون بہت ضروری ہے اور موجودہ صورتحال کو تبدیل کرسکتے ہیں۔

ایرانی صدر نے کہا کہ خطے میں دہشت گردی اور انتہا پسندی کے خلاف جنگ کے لئے جامع کوششوں پر زور دیتے ہوئے کہا کہ مشرق وسطی میں امریکی فوج کی موجودگی اور امریکیوں کی مداخلت پسندانہ اقدامات خطے میں عدم استحکام کی بنیادی وجہ ہیں۔

روحانی نے امریکی پابندیوں اور ایرانی قوم کے خلاف اقتصادی جنگ کے باوجود ایران اور چین کے مابین اقتصادی اور تجارتی تعاون کا بھی حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ نجی شعبے میں تعاون کا فروغ اقتصادی تعاون کے فروغ کا باعث ہے۔

انہوں نے کہا کہ کورونا ویکسین کے میدان میں ایران اور چین کے درمیان تعاون ضروری ہے۔

انہوں نے کہا کہ کورونا ویکسین کے میدان میں ایران اور چین کے درمیان تعاون ضروری ہے۔

ایرانی صدر نے اس خطرناک بیماری پر قابو پانے کیلیے ویکسین کی تیاری سمیت کورونا وائرس کا مقابلہ کرنے میں دونوں ممالک کی کامیابیوں کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ اس شعبے میں خاص طور پر مشترکہ ویکسین کی تیاری کے شعبے میں باہمی تعاون اور تجربات کو بانٹنے پر زور دیا۔

روحانی نے اس امید ظاہر کی کہ گزشتہ سال میں دونوں ملکوں کے مابین تجارتی خسارے کو2021 میں پورا کیا جائے گا ۔

انہوں نےمزید کہا کہ ہم چین کے ایک اہم تجارتی شراکت دار کی حیثیت سے دلچسپی رکھتے ہیں اور مشترکہ منصوبوں کے شعبے میں مزید تعاون کرنا چاہتے ہیں۔

چینی وزیر خارجہ نے تہران – بیجنگ کے دو طرفہ تعاون کے بارے میں کہا کہ چین نے ہمیشہ اس مسئلے کو بہت اہمیت دی ہے اور کچھ معاملات کے باوجود اس معاملے کو ایران کے ساتھ اپنے تعلقات  کو بڑھانے کو ترجیح دیتا ہے۔

وانگ ایی نے کہا کہ چین نے ہمیشہ امریکی جبر اور یکطرفہ پابندیوں کی مخالفت کی ہے اور بین الاقوامی میدان میں اپنی مخالفت کا مظاہرہ کیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ زیادہ سے زیادہ دباؤ ایک غیر قانونی اور غیر انسانی اقدام ہے جو عالمی برادری  کی طرف سے حمایت نہیں کی جاتی ہے۔

چینی وزیر خارجہ نے جوہری معاہدہ ایک کثیر الجہتی دستاویز کے طور پر کثیرالجہتی کا نتیجہ ہے ، اور کہا کہ تمام ملوث تمام ممالک کو  اس معاہدے پر مکمل طور پر عمل درآمد کرنا ہوگا۔

چینی وزیر نے بتایا کہ جوہری معاہدے سے امریکی علیحدگی بین الاقوامی کے خلاف ہے اور نئی انتظامیہ میں شامل امریکی اس پالیسی پر نظر ثانی کرنا چاہتی ہے اور چین ان کے اس اقدام کا خیرمقدم کرتا ہے۔

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha