اس وقت تک جوہری معاہدے میں اپنی ذمہ داریوں پر واپس نہیں آئیں گے جب تک کہ امریکہ ایران پر ہر طرح کی پابندیاں ختم نہ کرے: ایرانی سپریم لیڈر

تہران، ارنا – قائد اسلامی انقلاب نے اس بات پر زور دیا ہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران کے خلاف زیادہ سے زیادہ دباؤ ڈالنے کی امریکی پالیسی ناکام ہوگئی ہے اور اس بیوقوف نے ایران کو مذاکرات کی میز پر بیٹھنے اور اس کی شرائط عائد کرنے پر مجبور کرنے پر مجبور کیا ہے، یہ ، شرم اور رسوا کے ساتھ تاریخ کے کوڑے دان پر چلا گیا ہے۔

ان خیالات کا اظہار آیت اللہ العظمی "سید علی خامنہ ای" نے اتوار کے روز نئے ایرانی سال 1400 کے موقع پر اپنی تقریر میں کیا۔

انہوں نے فرمایا کہ جوہری معاہدے پر فریقین کے ساتھ ایران کے موقف کا واضح طور پر اعلان کیا گیا تھا اور ہم اس پالیسی سے آگے نہ بڑھیں جس پر ملک کے تمام عہدیداروں نے اتفاق کیا تھا یعنی یہ ہے کہ امریکیوں کو ایران پر ہر طرح کی پابندیاں منسوخ کرنی چاہئیں اور اگر یہ تجربے اور حقیقت سے ثابت ہوجائے کہ انہوں نے حقیقت میں یہ پابندی ختم کردی ہے تو ہم واپس جائیں گے۔ جوہری معاہدے سے متعلق ہمارے وعدے ، اور یہ ہماری غیر متفقہ پالیسی ہے۔

رہبر معظم نے فرمایا کہ ہمیں جوہری معاہدے کے حوالے سے پیش کردہ تجاویز پر جلدی نہیں ہے، ہم مواقع سے محروم نہیں ہوں گے بلکہ احتیاط سے نپٹیں گے اور ہم نے جو کچھ کیا ہے اس پر عمل درآمد کرنے میں تیزی آئی ہے۔ جبکہ دوسری فریقوں نے اپنی ذمہ داریوں پر عمل درآمد نہیں کیا اور ان کا کام صرف کاغذات پر تھا جبکہ ہمارے اقدامات زمین پر تھے۔

آیت اللہ خامنہ ای نے فرمایا کہ ہمارا صبر طویل ہے اور اپنے راستے پر ہیں لہذا اگر دوسری فریقوں نے اس پالیسی کو قبول کرلیا جس کا ہم نے اعلان اور اس پر عمل درآمد کیا تو سب کچھ ٹھیک ہوجائے گا ، لیکن اگر وہ آج کی طرح انکار کردیتے ہیں تو یہ ان کا کاروبار ہے، اور ان کا کاروبار ہے کہ ہم اپنی راہ پر گامزن ہوں اور اپنی پالیسی پر قائم رہیں۔

انہوں نے فرمایا کہ چھے سال گزر جانے کے باوجود سعودی عرب اب تک یمن کے عوام کو جھکا نہیں سکا ہے، امریکا نے جال بن کر آل سعود کو یمن کی جنگ کے دلدل میں پھنسا دیا۔

قائد اسلامی انقلاب نے فرمایا ہے کہ ملک میں پیداواری تحریک کو جاری رکھنا چاہئے اور اس بات پر روشنی ڈالی جانی چاہئے کہ پیداوار میں رکاوٹوں کو دور کرنا ہوگا۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
2 + 4 =