ایرانی محققین کی نمی سے بچنے والے ویلڈنگ الیکٹروڈ کی تیاری میں کامیابی

تہران، ارنا- ایک ایرانی اسٹارٹ اپ کے محققین نے نینو ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے ہوئے پہلی بار ملک میں نمی جذب کرنے کی 2 فیصد سے کم صلاحیت کے حامل ہائیڈروفوبک ویلڈنگ کا الیکٹروڈ تیار کرنے میں کامیابی حاصل کی۔

ان خیالات کا اظہار اس اسٹارٹ اپ کے ممبر اور شریف یونیورسٹی کے پروفیسر "مجید پورانوری" نے جمعرات کے روز ارنا نمائندے کیساتھ گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ الکلائن ویلڈنگ الیکٹروڈ اسٹیل انڈسٹری میں استعمال ہونے والے انتہائی مشہور الیکٹروڈ میں سے ایک ہیں اور کم ہائیڈروجن الیکٹروڈ کے نام سے جانے جاتے ہیں۔

پورانوری نے کہا کہ ویلڈنگ اسٹیل بالخصوص اعلی طاقت رکھنے والے اسٹیل میں ایک چیلنج، ماحول میں اس عنصر کی موجودگی کی وجہ سے کولڈ ہائیڈروجن کریکنگ کا مسئلہ ہے جو ویلڈ کے آس پاس کے علاقوں میں گھس جاتا ہے اور اس کے پھٹنے کا سبب بنتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایک بہترین اور کم سے کم ہائیڈروجن الیکٹروڈ الکلین الیکٹروڈ ہیں، تاہم ان الیکٹروڈ  کو ایک بڑا چیلنج ہے اور یہ کہ وہ نمی کے بہترین جاذب ہیں؛ یعنی، جب انہیں ان کی پیکیجنگ سے باہر لے جایا جاتا ہے تو وہ ایک خاص مدت کیلئے استعمال ہوسکتے ہیں اور اس کے بعد ہمیں ان کے دوبارہ استعمال کیلئے خصوصی غور و فکر کرنا ہوگا۔

پورانوری کا کہنا ہے کہ اس مقصد کے لئے، مرطوب ماحولیاتی حالات والی صنعتوں کو ایک ہی تکنیکی خصوصیات کیساتھ موثر الیکٹروڈ کی ضرورت ہے جو نمی اور پانی کے جذب کیخلاف مزاحم ہو۔

انہوں نے کہا کہ لہذا ہم نے سازگار حالات پیدا کرکے اور الیکٹروڈ پر ایک ہائڈرو فوبک پولیمر کوٹنگ بنا کر نینو ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے ہوئے مندرجہ بالا نقائص کو ختم کردیا اور نینو ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے ہوئے پہلی بار ملک میں نمی جذب کرنے کی 2 فیصد سے کم صلاحیت کے حامل ہائیڈروفوبک ویلڈنگ کا الیکٹروڈ تیار کرنے میں کامیابی حاصل کی۔

 **9467
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha