پوپ فرانسس کی ملاقات میں آیت اللہ سیستانی کا دانشمندانہ موقف اسلام کے اعزاز کا باعث بن گیا

تہران، ارنا- ایران سپریم لیڈر آفس کے نائب سربراہ برائے بین الاقوامی امور نے دنیا کے کیتھولک رہنماؤں سے ملاقات میں آیت اللہ سیستانی کی ذہانت کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ آیت اللہ سیستانی  کا دانشمندانہ موقف اسلام کے اعزاز کا باعث بن گیا۔

ان خیالات کا اظہار علامہ "محسن قمی" نے آج بروز بدھ کو ثقافتی شخصیات سے ایک ملاقات کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے اس تاریخی ملاقات میں آیت اللہ سیستانی کیجانب سے اہم بین الاقوامی امور بشمول القدس الشریف پر قبضے پر گفتگو کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ آیت اللہ سیستانی کے بیانات، قدس پر قبضہ کرنے والی ناجائز صہیونی ریاست سے تعلقات قائم کرنے کی سازش کی از قبل شکست کی علامت ہے۔

قمی نے کہا کہ آیت اللہ سیستانی کا غربت، احساس محرومی، امتیازی سلوک اور پابندیوں سے عدم اطمینان کا اظہار اور ان کا مذہبی رہنماؤں کو ذمہ داری کیساتھ کام کرنے پر زور، ابراہیمی ادیان کے پیروکاروں اور رہنماؤں میں لفظ "سوائے" کے قرآنی نظریے کی واضح مثال ہوسکتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ شیعوں کی تاریخی یادداشت، خاص طور پر نجف کے علاقے میں محتاط اور بصیرت رہنما دیکھنے میں آئے ہیں جو تاریخ کے مختلف ادوار میں اچھی طرح سے چمک چکے ہیں اور حالیہ برسوں میں قائد اسلامی انقلاب نے کہا کہ آیت اللہ سیستانی نجف میں چمک رہے ہیں۔

علامہ قمی نے آیت اللہ سیستانی کی عوام اور عیسائیوں کی جانوں کے تحفظ کی حکمت عملی کے لئے دنیا کے کیتھولک رہنما کی تعریف کی طرف اشارہ کرتے ہوئے اس امید کا اظہار کردیا کہ مغربی ممالک میں اسلامو فوبیا اور شیفوبیا سمیت اسلام اور عیسائیت کے مابین تعاون میں رکاوٹوں کو ہٹا دیا جائے گا اور اسلام اور عیسائیت کے حقیقی پیروکاروں کے تعاون سے ہم دنیا میں محروم لوگوں کی صورتحال میں بہتری اور اس پر حکومت کرنے والے جابرانہ حالات کی تبدیلی کا مشاہدہ کریں گے۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
5 + 1 =