ایران کا یمن کی جنگ میں اسلحہ کی حمایت کے خاتمے کا مطالبہ

لندن۔ ارنا -  جنیوا میں اقوام متحدہ کے دفتر میں ایران کے مستقل نمائندے نے تنازعات کے خاتمے ، یمن کی یکجہتی ، خودمختاری اور سیاسی آزادی کو برقرار رکھنے کے لئے مزید کوششوں کے فروغ کا مطالبہ کیا۔

یہ بات اسماعیل بقایی پیر کے روز اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل کے ایک اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔

انہوں نے کہا کہ تنازعات کے خاتمے ، یمن کی یکجہتی ، خودمختاری اور سیاسی آزادی کو برقرار رکھنے کے لئے مزید کوششوں کے فروغ کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ وہ لوگ جو جنگ کو ہوا دے رہے ہیں انہیں ان ہتھیاروں جو صرف بے گناہ لوگوں کو ہلاک کرنے کے لئے استعمال ہوتے ہیں، کی فروخت کو روکنا چاہیے۔

انہوں نے یمن کی انسانی صورتحال پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ یمنی عوام کے خلاف غیر قانونی دباو کا استعمال اقوام متحدہ کے چارٹر کی صریح خلاف ورزی اور حق خودارادیت کے اصول کے منافی ہے۔

بقایی ہامانہ نے یمنی بحران کے لئے کچھ ممالک کی مالی مدد کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ محاصرے کا خاتمہ اور فوجی مداخلت کا خاتمہ اور انسانی امداد تک رسائی کو آسان بنانے کو ترجیح دی جانی چاہئے۔

ایرانی سفیر نے مزید کہاکہ اسلامی جمہوریہ اقوام متحدہ کے خصوصی نمائندے اور دیگر فریقوں سے مشاورت کے ذریعے اس خونی تنازعہ کے حل کے لئے اپنی کوششوں کو جاری رکھنے کا خواہاں ہے۔

انہوں نے مزید کہاکہ ایران یمنی عوام کی تکالیف اور دکھ کے خاتمے کے لئے کسی بھی خیو خواہانہ اقدام کا خیرمقدم کرتا ہے۔

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
5 + 4 =