ایران میں رواں سال کے اختتام تک 140 ہزار ٹن کشمش کی برآمدات کی توقع

تہران، ارنا- ایرانی تجارتی عہدیدار نے کہا ہے کہ ملک میں رواں سال کے اختتام تک 140 ہزار ٹن کشمش کی برآمدات کی توقع کی جاتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ رواں سال کے ابتدائی 7 مہینوں کے دوران، کشمش کی برامدات کی مجموعی مالی شرح 93 ملین ڈالر تھی۔

ان خیالات کا اظہار "مرتضی معتمد" نے آج بروز پیر کو کشمش کی خرید و فروخت سے متعلق منعقدہ خصوصی اجلاس کے دوران، گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ حکومت، 16 ارب تومان (ایرانی قومی کرنسی) کی ترجیحی سہولیات سے کشمش پیداوار کرنے والوں اور برآمد کرنے والوں کی حمایت کرے گی۔

متعمد نے ملک میں 10 مختلف قسم کشمش کی پیداوار پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ کسانوں کے اضافی کشمش کی خریداری اور فیکٹری میں پروسسنگ اور برآمدات کی تیاری کیلئے بھیجے جاتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ایرانی کھپت سے زیادہ کشمش روس، یوریشیا اور یورپ کو برآمد کی جاتی ہے۔

متعمد نے کہا کہ ایرانی کسٹم کے اعداد و شمار کے مطابق، 2018ء کے دوران، 113 ہزار 500 ٹن کشمش کی برآمدات ہوئی جس کی مالیت کی شرح 152 ملین 937 ہزار ڈالر تھی اور اس کے علاوہ 2019ء میں بھی مجموعی طور پر 120 ہزار ٹن کشمش کی برامدات ہوئی جس کی مالیت کی شرح 164 ملین 271 ہزار تھی۔

 واضح رہے کہ ترکی میں پیداوار کشمش ایرانی کشمش سے مقابلہ کرتا ہے؛ اب ترکی، ازمیر کشمش کی تیاری اور یورپ کو اس کی بڑے پیمانے پر برآمدات کیساتھ کشمش کی قیمت کا تعین کرنے والا بن گیا ہے اور یہاں تک کہ یورپ کو برآمد کرنے کے لئے ایرانی مصنوعات کو بھی اگر ترکی کی سرحد عبور کرنا پڑے تو وہ مسائل کا شکار ہوجائیں گے؛ کیونکہ وہ مصنوعات کو بارڈر پر رکھتے ہیں تاکہ ایرانی مصنوعات کی برآمد کا وقت بڑھنے اور قیمتوں میں اضافے کیساتھ وہ ترکی کا مقابلہ نہ کرسکیں۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
9 + 3 =