اگر فریقین کی ذمہ داریوں کو پورا نہیں کیا گیا تو اضافی پروٹوکول پر عملدرآمد معطل ہوجائے گا: ایران

تہران، ارنا – ایرانی وزارت خارجہ کے ترجمان نے کہا ہے کہ اگر دوسرے فریقین اگلے دو ہفتے تک اپنی ذمہ داریوں کو پورا نہیں کریں تو ہم اضافی پروٹوکول پر عملدرآمد کو معطل کریں گے در حقیقت ایران سیف گارڈز اور این پی ٹی کا رکن ہے لیکن اضافی پروٹوکول معطل ہے۔

یہ بات "سعید خطیب زادہ" نے پیر کے روز اپنی پریس کانفرنس میں صحافیوں کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہی۔
اس موقع پر انہوں نے کہا کہ اس اقدام کا مطلب اضافی نگرانی کا خاتمہ ہے جس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ تمام نگرانی کا خاتمہ ہو، در حقیقت ایران سیف گارڈز اور این پی ٹی کا رکن ہے لیکن اضافی پروٹوکول معطل ہے۔
خطیب زادہ نے عالمی ایٹمی ایجنسی کے ساتھ تعاون جاری رکھنے کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ تمام اقدامات قابل واپسی ہے البتہ اگر دوسرے فریقین اپنی ذمہ داریوں کو پورا کریں۔
انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران کا موقف تبدیل نہیں کیا گیا اور اپنی جوہری سرگرمیوں کی پرامن نوعیت پر مبنی ہے اور ایرانی سپریم لیڈر کے بڑے پیمانے پر تباہی پھیلانے والے اور جوہری ہتھیاروں کے تقدس کا فتویٰ باقی ہے۔
انہوں نے امریکی وزیر خارجہ کے جوہری معاہدے پر حالیہ ٹوئیٹ پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ بدقسمتی سے امریکہ سابقہ انتظامیہ کے غلط راستے پر عمل پیرا ہے۔ آج جو کچھ ہو رہا ہے اس سے 20 جنوری سے پہلے مختلف نہیں تھا ہماری قوم پر ایک ہی زیادہ سے زیادہ دباؤ اور جرم اسی نقطہ نظر کے ساتھ جاری رہے۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha