سپین اور اٹلی کا ایران میں پتھر سے بنائے گئے فن پاروں کا خیر مقدم

تہران، ارنا- تہران میں قائم اٹلی اور سپین کے سفارت خانوں نے "پتھر سے بنائے گئے فن پارے" کے پہلے میلے کے روحانی حامی کے طور پر اپنی تیاری کا اظہار کیا اور یہ پتھر کے میدان میں فن اور فن تعمیر کو یکجا کرکے ملکی صلاحیتوں کو بحال کرنے کا ایک قدم ہے۔

ان خیالات کا اظہار ایران میں سٹون ڈیزائن کے پہلے قومی میلے کی پالیسی کونسل کے چیئرمین "فرہاد آزرمی" نے اتوار کے روز صحافیوں سے گفتکو گرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے کہا کہ اس میلے میں تعمیراتی سامان سے ہٹ کر پتھر سے پرے دیکھنے کا ایک موقع ہے؛ اور در حقیقت یہ فن تعمیر اور آرٹ کے فیوژن کیساتھ پائیداری اور استحکام کی طرف مختلف نقطہ نظر سے دیکھنا ہے۔

 آزرمی نے کہا کہ اٹلی اور سپین نے عالمی میدان میں اپنی صلاحیتوں کا بخوبی مظاہرہ کیا ہے لہذا ان کی اس میلے کی روحانی حمایت؛ ایرانی فنکاروں کیلئے بین الاقوامی میدان میں اپنے آپ کو تعارف کرنے کا ایک اچھا موقع ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ آج کل، آرائشی پتھر اور اگواڑے کی برآمد کے شعبے میں ایران کا بااثر مقام نہیں ہے اور اس اہم مسئلے کو مختلف طریقوں سے بحال کرنا ہوگا۔

آزرمی نے کہا کہ ایران میں پتھر کی سالانہ برآمدات کی مالی شرح 350 سے 450 ملین ڈالر تک ہے جس کو ایک ارب ڈالر بڑھانے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ منعقدہ میلے میں پانچ جج، پتھر سے بنائے گئے فن پاروں کو جانچنے کے انچارج ہوں گے؛ ان میں سے تین ایرانی، ایک اطالوی اور دوسرا ہسپانوی ہیں۔

آزرمی نے کہا کہاس میلے کی پہلی پوزیشن حاصل کرنے والے کے انعام کو 50 ملین تومان ( ایرانی قومی کرنسی)، دوسری پوزیشن حاصل کرنے والے 30 ملین تومان اور تیسری پوزیشن حاصل کرنے والے 20 ملین تومان کا ذکر کیا اور کہا کہ اور بیسواں شخص تک نقد انعامات ہوں گے۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha