خطے میں چھ فریقی تعاون کی یونین کی تشکیل کے خواہاں ہیں:ایرانی وزیر خارجہ

تہران، ارنا - اسلامی جمہوریہ ایران کے وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ ہم خطے میں چھ فریقی تعاون کی یونین کی تشکیل کے خواہاں ہیں۔

یہ بات محمد جواد ظریف نے منگل کے روز ماسکو پہنچنے پر کہی۔

انہوں نے کہا کہ ہم خطے میں چھ فریقی تعاون کی یونین بنانے کے لیے تلاش کر رہے ہیں اور یہ قفقاز کے ممالک کے اس علاقائی دورے کا سب سے اہم ہدف ہے۔

انہوں نے تہران اور ماسکو کے مابین اسٹریٹجک تعلقات کی گہرائی کا ذکر کرتے ہوئے کہاکہ اس دورے کے دوران ہم روسی وزیر خارجہ سے خطے میں ہونے والی تبدیلیاں خاص طور پر  ناگورنو کاراباخ کا مسئلہ ،جوہری معاہدے اور دوطرفہ تعلقات اور بین الاقوامی امور سمیت شام ، افغانستان اور یمن کے بحران پر بات چیت کریں گے۔

ظریف جنہوں نے روس سے پہلے آذربائیجان کا دورہ کیا ہے اور اس ملک کے بعد جارجیا ، آرمینیا اور ترکی میں جائیں گے، کرونا وائرس کے پھیلنے کے باوجود دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کے تسلسل پر زور دیا ہے۔

انہوں نے اس سفر میں اپنے دیگر اہداف کا حوالہ دیتے ہو‏ئے کہا کہ: ان اہداف میں سے ایک ایران اور روس کے مابین اسٹریٹجک تعلقات کو فروغ دینا ہے اور دوسرا مقصد علاقائی مسائل کا جائزہ لینا ہے۔

ظریف نے کہا کہ ناگورا-کاراباخ کی جنگ روسی فیڈریشن اور خود ولادیمیر پیوٹن کی کوششوں سے روک دی گئی اور کچھ معاہدوں پر دستخط کیا گیا جو یہ معاہدے مختلف شعبوں بشمول ٹرانزٹ اور نقل و حمل میں بہت اہم ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ آذربائیجان کے صدر الہام علی یف اور آذری دوستوں سے ہماری اچھی ملاقاتیں کیں ہیں اور آج ہم روسی فریق سے بات چیت کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ آج کی ملاقات میں ہم شام ، افغانستان یمن کی صورتحال، بین الاقوامی مسائل اور تمام فریقوں کی جانب سے جوہری معاہدے کے نفاذ کی ضرورت پر تبادلہ خیال کریں گے

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha