ایران اور جاپان کا فضائی آلودگی ناپنے کے آلات اور ہسپتالوں کے سامان کی خریداری پر مذاکرہ

تہران، ارنا- ایران اور جاپان کے نمائندوں نے جاپانی طرز کے ایک اسپتال کی تعمیر کے منصوبے پر عمل درآمد، فضائی آلودگی کی پیمائش کے آلات کی خریداری اور بجلی گھر بنانے کے لئے قرض حاصل کرنے پر تبادلہ خیال کیا۔

تفصیلات کے مطابق، آج بروز ہفتے کو جاپان بین الاقوامی تعاون ایجنسی، ایرانی تنظیم برائے منصوبہ بندی اور بجٹ، ایرانی وزارت خارجہ اور نیشنل میپنگ ایجنسی کے نمائندوں کی شرکت سے ایک اجلاس کا انعقاد کیا گیا۔

اس اجلاس میں اسپتال کی تعمیر، دارالحکومت تہران کی فضائی آلودگی اور قدرتی آفات سے نمٹنے پر تعاون کے طریقوں کا جائزہ لیا گیا۔

اس موقع پر ایرانی اور جاپانی فریقین نے اس امید کا اظہار کرلیا کہ پابندیوں کی منسوخی سے باہمی تعاون کا مزید فروغ ہوجائے گا۔

اس موقع پر تنظیم برائے منصوبہ بندی اور بجٹ کے شعبہ تعلقات عامہ کی خاتون سربراہ "نسرین وزیری" نے ایران اور جاپان کے درمیان منصوبوں کی عدم تکمیل اور جاپانی حکومت کیجانب سے ان کے عدم نفاذ پر تبصرہ کرتے ہوئے اس امید کا اظہار کردیا کہ پابندیوں کی منسوخی سے ان مشترکہ منصوبوں کا مکمل اور نفاذ ہوجائے گا۔

انہوں نے صحت کے شعبے کو پابندیوں سے استتثنی دینے پر تبصرہ کرتے ہوئے دونوں ممالک کے درمیان تعاون کے فریم ورک کے اندر جاپانی کے طرز انداز میں اسپتال کی تعمیر، "آرش اور "امام حسین" اسپتالوں میں ضروری سامان کی فراہمی اور ایران  یونیورسٹی کے لیبارٹری اور مطالعاتی آلات کی فراہمی میں جلدی پر زور دیا۔

اس کے علاوہ ایرانی نمائندوں نے کوویڈ- 19 کیخلاف مقابلہ کرنے کیلئے جاپان سے قرضہ لینے کی درخواست دی جس سے جاپانی نمائندوں نے اتفاق کیا۔

وزیری نے کہا کہ "شہید مفتح" اور "شہید رجائی" تھرمل پاور پلانٹس کے لئے قرضوں کا مسئلہ حل نہیں ہوا ہے اور ملک کو بجلی کی فراہمی کی ضرورت کے پیش نظر اس مسئلے کے حل کی ضرورت اہم ہے۔

اس موقع پر جاپانی فریق نے مشترکہ منصوبوں پر عمل درآمد میں طے ہونے والے باہمی معاہدوں کے نفاذ و نیز پابندیوں کے کردار کا ذکر کیا۔

انہوں نے کہا کہ تہران فضائی آلودگی لیبارٹری کو لیس کرنے کے لئے کچھ سازوسامان بھی خریدا گیا ہے اور ہم تہران ایئر کوالٹی کنٹرول پروجیکٹ میں تعاون جاری رکھنے کے لئے ان سامان کی درآمدات کرنے کے مرحلے میں ہیں۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha