فلسطینی ارمان؛ 21 ویں صدی کا عالم اسلام کا ارمان ہے: ایرانی اسپیکر

تہران، ارنا- ایرانی پارلیمنٹ کے اسپیکر نے کہا ہے کہ آج، دنیائے اسلام کیلئے کوئی بھی مسئلہ، القدس کی آزادی کے مسئلے سے زیادہ اہم نہیں ہے اور فلسطینی ارمان؛ 21 ویں صدی کا عالم اسلام کا ارمان ہے۔

ان خیالات کا اظہار "محمد باقر قالیباف" نے آج بروز پیر کو فلسطینی حامی ممالک کی پارلیمنٹوں کے خارجہ پالیسی کمیشنوں کے ورچوئل اجلاس کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے کہا کہ امریکی- صہیونی منصوبہ یعنی صدی کی ڈیل کو شکست کا سامنا ہوچکا ہے اور بیدار قومیں، صہیونیوں کو خطے پر مسلط ہونے کی اجازت نہیں دیں گی۔

قالیباف نے کہا کہ دشمن عناصر، پابندیاں، یکطرفہ اقدامات اور دہمکی دینے سے اسلامی اتحاد کو نقصان کا شکار کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ فلسطینی مسئلے کی اہمیت کے پیش نظر، اسلامی ملکوں کی پارلیمانوں نے "قدس؛ ہمارے اتحاد کا محور" کے نعرے پر اپنی توجہ مرکوز کرنے سے صہیونی ریاست سے تعلقات کو استوار کرنے اور معمول پر لانے کا مقابلہ کرنے اور مسلمانوں کا پہلہ قبلہ یعنی القدس شریف کی آزادی کی حمایت کرنے کیلئے ساتھ مل کر اسی اجلاس کا انعقاد کیا ہے۔

قالیباف نے کہا کہ فلسطین کے مظلوم عوام، خصوصا غزہ کی پٹی کے خلاف صہیونی دہشتگرد ریاست کے مسلسل جرائم کو تاریخ کی یادداشت سے مٹا نہیں سکتا۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران، 12 سال قبل، غزہ کیخلاف صہیونی ریاست کی 22 روزہ جارحیت کی پہلی برسی کے موقع پر فلسطین کی مظلوم قوم اور مزاحمتی محور کے حامی کی حیثیت سے 18 جنوری کو "غزہ؛ فلسطینی مقاومت کی علامت" کے نام پر رکھا گیا اور یہ ہمیشہ ایرانی کلینڈر میں باقی رہے گا۔

ایرانی پارلیمنٹ کے اسپیکر نے کہا ہے کہ آج دنیائے اسلام کیلئے کوئی بھی مسئلہ، القدس کی آزادی کے مسئلے سے زیادہ اہم نہیں ہے اور فلسطینی ارمان 21 ویں صدی کا عالم اسلام کا ارمان ہے۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha