ایران کی افغانستان میں 5 ارب ڈالر کی برآمدات کی توقع کی جاتی ہے

تہران، ارنا- ایران کی تجارتی ترقیاتی تنظیم کے سربراہ نے کہا ہے کہ ملک کے مشرقی کسٹمز سے افغانستان کو مصنوعات کی برآمدات کی مالی شرح 3 ارب ڈالر سے زائد ہوگئی ہے اور توقع کی جاتی ہے کہ 2021 کے آخر تک یہ رقم 5 ارب ڈالر تک پہنچ جائے گی۔

"حمید زادبوم" نے اتوار کے روز گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ صوبے اردبیل میں واقع بیلہ سوار کسٹم سے مصنوعات کی برامدات میں قابل قدر اضافہ ہوا ہے اور اس میں گزشتہ سال کے مقابلے میں 98 فیصد کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے۔

انہوں نے مزاحمتی اقتصاد میں برآمدات کے فروغ کے کردار کو انتہایی اہم قرار دیتے ہوئے اس سلسلے میں کسٹمز اداروں کی اہمیت پر زور دیا۔

واضح رہے کہ ایرانی کسٹم ادارے کے سربراہ نے حالیہ دنوں میں کہا تھا کہ پچھلےمہینے کے دوران ایران کی غیر ملکی تجارت کی شرح 7 ارب 370 ملین ڈالر تھی۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس رقم کے 3 ارب 644 ملین ڈالر کا حصہ برآمدات اور 3 ارب 726 ڈالر کا حصہ درآمدات پر مشتمل ہے۔

روح اللہ لطیفی نے مزید کہا کہ اسی عرصے کے دوران درامدات میں گزشتہ دو میہنے کے مقابلے میں مالیت کے لحاظ سے 634 ملین ڈالر کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے اور برآمدات میں 434 ملین ڈالر کا اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ گزشتہ دو مہینوں کے دوران ایران میں غیر ملکی تجارت کی شرح مالیت کے لحاظ سے 6 ارب 302 ملین ڈالر تھی جس میں 3 ارب 210 ملین ڈالر درآمدات اور 3 ارب 92 ملین ڈالر برآمدات کا حصہ تھا۔

لطیفی نے کہا کہ لیکن گزشتہ مہینے کے دوران ایران کی غیر ملکی تجارت کی شرح 7 ارب 370 ملین ڈالر تھی جس میں گزشتہ دو مہینے کے مقابلے میں 17 فیصد کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسی عرصے کے دوران برآمدات میں 5۔13 فیصد کا اضافہ ہوا ہے اور درآمدات میں بھی 5۔20 فیصد کا اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔

ایرانی کسٹم ادارے کے سربراہ نے کہا ہے کہ چین، عراق، ترکی، متحدہ عرب امارات اور افغانستان ایرانی برآمدات کی پہلی منزلیں ہیں۔

**9467

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha