ایرانی وزیر صحت کا یورپ میں داخل ہونے والے مسافروں کی جانچ اور قرنطین کرنے کا حکم

تہران، ارنا – ایرانی وزیر صحت ، علاج اور طبی تعلیم نے کہا ہے کہ یورپ سے تمام مسافر جو ہوا ، زمین اور سمندری سرحدوں سے براہ راست یا بالواسطہ طور پر ملک میں داخل ہوتے ہیں ، داخلے کے مقامات پر دوبارہ جانچ کے علاوہ مناسب مدت اور متعلقہ پروٹوکول کے مطابق رہائش گاہ پر قرنطین میں رہنے کی ضرورت ہے۔

یہ بات ڈاکٹر "سعید نمکی" نے اتوار کے روز بیشتر یورپی ممالک میں تغیر پزیر وائرس کے پھیلاؤ کے بعد نائب وزیر صحت ڈاکٹر علیرضا رئیسی کو لکھے گئے خط میں کہی۔
انہوں نے میڈیکل یونیورسٹیوں کے سربراہان کو ہدایت کی ہے کہ وہ تمام متعلقہ ہدایات پر عمل درآمد کریں۔
ڈاکٹر نمکی نے کہا کہ پچھلے خطوط اور ہدایات کے بعد یہ زیادہ تر یورپی ممالک میں تغیر پزیر وائرس کے پھیلاؤ کی وجہ سے ضروری ہے کہ تمام مسافر جو ہوائی ، زمین اور سمندری سرحدوں کے ذریعہ براہ راست یا بالواسطہ طور پر یورپ سے ملک میں داخل ہوتے ہیں، جانچ کے علاوہ مناسب مدت کے لئے اور متعلقہ پروٹوکول کے مطابق رہائش گاہ پر دوبارہ قرنطین کی ضرورت ہے۔
انہوں نے مزید کہا کہ صحت کے عملے کا پابند ہے کہ وہ ہر روز صحت کی پیروی کریں اور اس مرض کی علامات کو مناسب طریقے سے ہر دن معلوم کریں اور اگر ٹیسٹ مثبت ہے یا اس میں علامات پائے جاتے ہیں تو ، فیملی سمیت براہ راست متعلقہ افراد اور بالواسطہ متعلقہ افراد کی جانچ کی جانی تھی۔
انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ غیر یورپی مسافروں کی آمد پر جیسا کہ پہلے اعلان کیا گیا ہے ، ضروری ہے کہ تفتیش اور نگہداشت کی سطح میں اضافہ کیا جائے اور سخت پروٹوکول کے ذریعہ متاثرہ معاملات میں کسی قسم کی نظرانداز ہونے کے امکان کو ختم کیا جائے۔
وزیر صحت نے کہا کہ اس ضمن میں سرحدی صوبوں میں میڈیکل یونیورسٹیوں کے سربراہوں کے ساتھ ساتھ مختلف صوبوں میں جو غیر ملکی مہمانوں کو مختلف طریقوں سے استقبال کرتے ہیں تمام متعلقہ ہدایات پر عملدرآمد کی نگرانی اور ان پر عمل کرنے کے پابند ہیں۔
تفصیلات کے مطابق، ڈاکٹر سعید نمکی نے کہا کہ ایران میں تغیر پزیر برطانوی کرونا وائرس کے چار نئے کیس دریافت ہوئے ہیں اور ان کے کیریئر کا علاج کیا جارہا ہے۔
ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@

متعلقہ خبریں

آپ کا تبصرہ

You are replying to: .
captcha